ماں اور میں

iattock

محبت کے رشتوں میں دارا تھا میں

سخی ماں کی آنکھوں کا تارا تھا میں

مری ماں کی لہریں مجھے چومتی

سمندر سی ماں کا کنارا تھا میں

مرے دکھ چھپاتی تھی جانے کہاں

اگرچہ نہاں غم کا مارا تھا میں

کیا دفن ماں کو تو مجھ کو لگا

کہ دلبستگی کا سہارا تھا میں

گناہوں سے لُتھڑا تھا میرا بدن

مگر ماں کی آنکھوں میں پیارا تھا میں

مری ماں کی دنیا مرے دم سے تھی

امیدوں کا محور بھی سارا تھا میں

جو قائم بلاتی تھی کہہ کر قمر

اُسی ماں کے پاوں کا گارا تھا میں

حبدار قائم

سیّد حبدار قائم

اٹک

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١1989 میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

اٹھائے گا کون ہاتھ اب دعا کیلئے

اتوار مئی 9 , 2021
آج ماؤں کے عالمی دن پر اپنی والدہ کو ایک خراج تحسین عمران اسد کے قلم سے
iattock