لگا رہی ہے صدا یوں صبا مدینے میں

لگا رہی ہے صدا یوں صبا مدینے میں

“مرے حضورؐ ہیں جلوہ نما مدینے میں”

میں تتلی بن کے تصور میں پر لگا کے اُڑا

وہاں پہ خضرٰی کو چوما ، اڑا مدینے میں

جو دل میں آئے وہ مانگو خدا سے خضریٰ پر

ہمیشہ ہوتی ہے رب کی عطا مدینے میں

چلے ہو منگتے تو مانگو کرم شفاعت کا

قبول ہو گی تمہاری دعا مدینے میں

وہاں اترتی ہے الہام کی سدا رم جھم

تو پھر خدایا کرم کر بُلا مدینے میں

جو مدحتوں میں سحابِ کرم کا طالب ہوں

طلب ہے مجھ کو ثنا کی گھٹا مدینے میں

اگر ستایا ہےظلمت نے زندگی میں تمہیں

چلو وہاں پہ ملے گی ضیا مدینے میں

وہاں پہ جا کے ملاقات کی تمنا ہے

عجیب تر ہے گدائی ادا مدینے میں

میں تتلی بن کے لپٹتا رہا ہوں جالی سے

کہا فرشتوں نے ہے خوب ادا مدینے میں

مجھے کہا ہے یہ میرے شعور نے قائم

جلا نصیبوں کا تو بھی دیا مدینے میں

hubdar qaim

سیّد حبدار قائم

آف غریبوال

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١1989 میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

اُردو غزل کا توانا شاعر ...حفیظ شاہدؔ

منگل دسمبر 28 , 2021
حفیظ شاہدؔ کی غزل ’’زندگی آمیز بھی ہے اور زندگی آموز بھی۔‘‘ انہوں نے زندگی کو اس کی تلخیوں اور رعنائیوں کے ساتھ بیان کیا ہے
Hafeez Shahid