شعیب کیانی کی نظم “میں نہیں رو سکا”

شعیب کیانی کی نظم “میں نہیں رو سکا” کا فنی و فکری جائزہ

شعیب کیانی کی نظم “میں نہیں رو سکا” گہرے ذاتی اور معاشرتی انتشار کے درمیان جذباتی ضبط پر مبنی شاعری ہے، اس میں معاشرتی اقدار کا گہرائی سے مطالعہ کیا گیا ہے۔ یہ نظم اپنی پُرجوش اشعار کے ساتھ، رد، سماجی دباؤ، اور مردانگی کے بوجھ کے موضوعات پر تفصیل سے روشنی ڈالتی ہے۔
نظم ماتم اور غم کی ایک واضح تصویر کشی کے ساتھ شروع ہوتی ہے – “کوئی اپنا مارا، میرا اپنا مارا” نقصان اور جذباتی دباؤ سے بھری داستان کے لیے لہجہ ترتیب دیتا ہے۔ شاعر عورتوں کے رونے اور بچوں کے رونے کا منظر دیکھتا ہے، پھر بھی وہ آنسو بہانے سے قاصر رہتا ہے، شدید غم کے عالم میں جذباتی بے حسی کا احساس سمیٹتا ہوا نظر آتا ہے۔
نظم کا بیانیہ آگے بڑھتا ہے کہ شاعر اپنی پہلی حقیقی محبت کو یاد کرتا ہے، جسے مسترد اور رد کر دیا گیا تھا، جس سے وہ دم توڑتا ہے اور اپنی اذیت کا اظہار کرنے سے قاصر رہتا ہے۔ منظر کشی میں شدت آتی ہے جب اس پر الزامات لگائے جاتے ہیں، استعاراتی طور پر اس کے کردار کی لاش کو پاؤں کے نیچے رکھ کر، اسے شرمندگی اور مایوسی میں دفن کرنے کے طور پر بیان کیا جاتا ہے۔ جسمانی تھکن اور جذباتی ویرانی کی تفصیل کے ساتھ شاعر پر جسمانی اور جذباتی اثر واضح ہو جاتا ہے۔


شاعر کی آواز معاشرتی توقعات اور زہریلے مردانگی کا ایک طاقتور الزام بن جاتی ہے۔ وہ اپنی صلاحیت سے زیادہ ذمہ داریوں کے بوجھ تلے دبے ہونے کی وضاحت کرتا ہے، جس کی علامت ایک عورت کو اپنے کندھوں پر اٹھانا، اپنے والد کا بوجھ اٹھانا، اور تلوار کا سونپنا – تمام معاشرتی دباؤ اور صنفی کردار کی استعاراتی نمائندگی کے طور پر ہمارے سامنے ہیں۔ نظم ایک ایسے شخص کی واضح تصویر پیش کرتی ہے جو معاشرتی اصولوں کے بوجھ سے سوئے ہوئے دکھائی دینے کے ساتھ ساتھ متحرک پن سے بھی محروم ہے۔
پوری نظم میں شاعر تخیل کی دنیا میں سکون تلاش کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے، ایک ایسی جگہ جانے کی خواہش کا اظہار کرتا ہے جہاں وہ اپنا درد بانٹ سکتا ہے اور کمزوریوں کو گلے لگانا چاہتا ہے۔ وہ ایک ایسی جگہ کا متمنی ہے جہاں عورتیں آزادانہ طور پر ہنس سکیں اور مرد کھلے عام رو سکیں، شاعر نے روایتی صنفی کرداروں کی قید کو اجاگر کرنے کی کوشش کی ہے جو جذباتی اظہار سے انکار کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ شاعر کی اپنے درد کے ساتھ دنیا کا مقابلہ کرنے کی خواہش صداقت اور جذباتی آزادی کی جستجو کو اجاگر کرتی ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ شعیب کیانی کی نظم “میں نہیں رو سکا” جذباتی دباؤ اور معاشرتی مجبوریوں پر ایک پُر اثر تنقید کے طور پر ہمارے سامنے ہے۔ فکر انگیز منظر کشی اور خالص جذبات کے ذریعے نظم سماجی توقعات اور ذاتی پریشانیوں کے درمیان پھنسے افراد کی جدوجہد کو پیش کرتی ہے۔ شاعر صنفی اصولوں کی دوبارہ جانچ پڑتال کا مطالبہ کرتا ہے اور ایک زیادہ ہمدرد اور جامع معاشرے کی وکالت کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے، جہاں جذباتی کمزوری عام کمزوری کا مترادف نہیں ہے۔ کیانی کی نظم جذباتی صداقت کی اہمیت اور مصیبت کے وقت رابطہ اور ہمدردی کی انسانی ضرورت کی ایک طاقتور یاد دہانی کے طور پر ہمارے سامنے ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے شعیب کیانی کی نظم پیش خدمت ہے۔
*
“میں نہیں رو سکا” (نظم)
*
کوئی اپنا مَرا، میرا اپنا مَرا
میرے آنگن میں ماتم کی صف بچھ گئی
عورتیں بین کرتی رہیں، بچے روتے رہے
میں نہیں رو سکا
میری پہلی محبت جو سچی بھی تھی اور سُچی بھی تھی
جب کسی نے اسے مسترد کر دیا
میرے سینے میں یک دم گھٹن بھر گئی سانس رکنے لگی
میں نہیں رو سکا
مجھ پر تہمت لگائی کسی شخص نے
میرے کردار کی لاش پر پاؤں رکھ کر وہ اونچا ہوا
میرے پیروں کے نیچے زمیں نا رہی
میں نہیں رو سکا
جیسے چرواہا جھولی میں پتے دیکھا کر (جو ہوتے نہیں ہیں)
بلاتا ہے اپنی طرف بکریاں۔۔۔
مجھ کو ایسے کسی نے کہا “آ محبت کریں
اس کے نزدیک جا کر کُھلا اس کی جھولی میں چاہت کے پتے نہیں
میری چیخیں گلے میں رُکی رہ گئیں
میں نہیں رو سکا
میں نے دفتر میں ایک نوکری ڈھونڈ لی
تھوڑا تھوڑا وہاں روز مرتا رہا
کام کرتا رہا
میرے کانوں میں لاوا اُنڈیلا گیا
میرے چہرے کی رونق مٹائی گئی
ایک ایک رگ سے خوں کو نچوڑا گیا
میرا سارا بدن زرد ہوتا رہا، درد ہوتا رہا
میں نہیں رو سکا
میرے کاندھے پہ عورت کو رکھا گیا
پُشت پر باپ کا کنبہ لادا گیا
سر پر کوّے بھی بھوکے بٹھائے گئے
میرے ہاتھوں میں تلوار دے دی گئی
مجھ کو میرے خدا سے ڈرایا گیا
جب کمر جُھک گئی
میں گِھسٹ کر چلا
کہنیاں چِھل گئیں
گُھٹنے زخمی ہوئے
خون رستا رہا
میں نہیں رو سکا
حادثوں، آفتوں، بم دھماکوں
وباؤں میں اور جنگ میں
میرے اپنوں کی لاشیں اٹھائی گئیں
میرا دل بھر کے آنکھوں تلک آگیا
میں نہیں رو سکا
رات دنیا سے چھپ کر میں ایسے جہاں کو خیالوں میں لاتا ہوں جس میں سبھی دوست ہوں اس طرح
جس طرح پیڑ کی ایک ٹہنی کٹے تو سبھی ٹہنیاں خود پر محسوس کرتی ہیں آرے کے دانت
اور سبھی ٹہنیاں اپنا رس بانٹتی ہیں کٹی شاخ سے
پھر کئی ٹہنیاں پھوٹتی ہیں اسی شاخ سے
ایک ایسے جہاں کو خیالوں میں لاتا ہوں
جس میں سبھی عورتیں شادمانی میں کُھل کر ہنسیں
درد میں مرد بھی رو سکیں
میں بہت رو کے چلا کے دنیا کو بتلا سکوں
میرے اعصاب میں کس قدر درد ہے
میں تصور میں لاتا ہوں ایسی جگہ
جس جگہ مجھ کو روتا ہوا دیکھ کر
کوئی یہ نا کہے مرد بن مرد بن
صبح ہوتے ہی میں اپنی ساری اذیت
کو کاندھے پر لادے ہوئے کام پر جاتا ہوں
اس جہاں کے خیالوں سے باہر نکل آتا ہوں
کیونکہ ایسا جہاں میری مردانگی کو گوارا نہیں۔

[email protected] | تحریریں

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

مصنوعی استاد: فوائد و نقصانات

اتوار مئی 12 , 2024
ایک جدید استاد اور بھی ہے جس کا جسمانی وجود نہیں ہے لیکن پھر بھی وہ اپنے شاگردوں کو پڑھاتا ہے وہ ایک مشین ہے
مصنوعی استاد: فوائد و نقصانات

مزید دلچسپ تحریریں