ساجد ناز مہروی کی غزل کے کھوار تراجم

ساجد ناز مہروی کی غزل کے کھوار تراجم کا تجزیاتی مطالعہ

چترال، مٹلتان کالام اور شمالی پاکستان کے گلگت بلستان کی وادی غذر میں بولی جانے والی زبان کھوار میں پشتو، فارسی، ہندکو، پنجابی، سرائیکی اور دیگر مادری زبانوں کی نظم و نثر کے تراجم کیے جارہے ہیں، جس سے کھوار زبان کے قارئین ان زبانوں کے ادب اور ادیبوں کے افکار و خیالات سے مستفید ہو رہے ہیں۔ راقم الحروف نے پشتون شاعر خوشحال خان خٹک، اردو شاعرہ پروین شاکر، ناصر کاظمی، ساحر لدھیانوی، علامہ اقبال، مرزا اسد الله خان غالب اور دیگر شعرا کی شاعری کو کھوار زبان کے قالب میں ڈھال کر قارئین کے لیے آسانی پیدا کی ہے۔ اردو شاعری کے حوالے سے دیکھا جائے تو پتہ چلتا ہے ساجد ناز مہروی ایک مقبول شاعر بن کر ابھرے ہیں۔ ان کی غزلوں میں محبت، تڑپ اور خود شناسی کا ایک عمدہ اظہار پایا جاتا ہے جو روح کو ایک ایسے مقام تک لے جاتی ہے جہاں الفاظ دل کے راگ کے ساتھ رقص کرتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔

ساجد ناز مہروی کی غزل کے کھوار تراجم
ساجد ناز مہروی


غزل کا آغاز ایک گہرے اور دلچسپ دعوے سے ہوتا ہے جیسے: “حسنِ کردار بن گیا ہوں میں” یعنی میں کردار کا مجسم ہو گیا ہوں یہاں مہروی خود شناسی کے سفر کے لیے دعویٰ کرتا ہوا نظر آتا ہے، جہاں شاعر کی شخصیت خوبی اور دیانت کے جوہر میں بدل جاتی ہے۔ یہ سطر نہ صرف زبان پر شاعر کی مہارت کی عکاسی کرتا ہے بلکہ انسانی وجود کی گہرائیوں میں جانے کی صلاحیت کو بھی سامنے لاتا ہے۔
جیسے جیسے غزل کے اشعار سامنے آتے ہیں، شاعر کی محبوب سے ملنے کی تڑپ واضح ہوتی جاتی ہے۔ مثال کے طور پر یہ اشعار دیکھئیے ”تیری آنکھوں سے پی کے جانِ من/تیرا بیمار بن گیا ہوں میں” نشہ اور بیماری کی یہ منظر کشی محبت کی نشہ آور رغبت اور اس کے نتیجے میں آنے والی کمزوری کا استعارہ پیش کرتے ہیں۔ مہروی کا علامت نگاری کا ماہرانہ استعمال غزل میں پیچیدگی کی تہوں کو جوڑتا ہے اور قارئین کو اس کے اسرار و رموز سے پردہ اٹھانے کی دعوت دیتا ہے۔
شاعر مزید افسوس کا اظہار کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے جیسے ” میں غموں کو اُدھار لیتا ہوں/کتنا غم خوار بن گیا ہوں میں” یہاں مہروی ہمدردی کے موضوع اور ہمدرد انسان پر اس کے اثرات کو تلاش کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ دوسروں کے دکھوں کا بوجھ اٹھانے کے بارے میں یہ خود شناسی عکاسی شاعر کی انسانی دکھوں کے تئیں گہری ہمدردی اور حساسیت کو ظاہر کرتی ہے۔
اس کے بعد کے شعر میں، مہروی نے ایک زبردست تضاد کا لفظ استعمال کیا ہے: جیسے ” ایک پتھر تھا ‘ اور اب ہیرا/میری سرکار ‘ بن گیا ہوں میں” (یعنی کبھی میں ایک پتھر تھا اور اب ہیرا بن گیا ہوں)۔ سختی اور چمک کا یہ جوڑ محبت کی تبدیلی کی طاقت کی علامت ہے، جو دنیا کو غیر معمولی شئے میں بدلنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ یہ شاعر کے مبہمیت سے خود شناسی تک کے سفر کی طرف بھی اشارہ کرتا ہے، جہاں وہ محبت کے میں ایک جواہر بن کر ابھرتا ہے۔
یہ شعر دیکھیے کہ ” حُسن کا کیا نشہ چڑھا اے ناز/سب سے بے کار بن گیا ہوں میں” (یعنی خوبصورتی کا کیا نشہ ہے اے ناز، میں اب بے وقعت ہو گیا ہوں) کے ساتھ غزل اپنے عروج پر پہنچتی ہے۔ یہاں،ساجد ناز مہروی جسمانی خوبصورتی کی عارضی نوعیت اور انسانی دل پر اس کی عارضی گرفت کا سامنا کرتا ہوا نظر آتا ہے۔ اور وجودی حساب کا یہ لمحہ شاعر کی سطحیت سے مایوسی اور گہرے معنی اور مقصد کی تلاش کی عکاسی کرتا ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ ساجد ناز مہروی کی غزل اردو دان طبقے کے ساتھ ساتھ کھوار زبان کے قارئین کے دلوں اور دماغوں کو بھی یکساں طور پر موہ لینے کی لازوال طاقت کا ثبوت ہے۔ زبان، علامت نگاری اور منظر نگاری کے اپنے شاندار استعمال کے ذریعے، ساجد ناز مہروی قارئین کو خود کی دریافت اور خود شناسی کے ایک تبدیلی کے سفر پر مدعو کرتا ہے۔ ان کی غزل نہ صرف محبت، چاہت اور وجودی اضطراب کے لازوال موضوعات سے بھرپور ہے بلکہ انسانی تجربے کی خوبصورتی اور پیچیدگی کی بھی ایک پُرجوش یاد دہانی کا کام کرتی ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے ساجد ناز مہروی کی اردو غزل اور منظوم کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔
*
غزل
*
حُسنِ کردار بن گیا ہوں میں
یعنی تلوار بن گیا ہوں میں
تیری آنکھوں سے پی کے جانِ من
تیرا بیمار بن گیا ہوں میں
میں غموں کو اُدھار لیتا ہوں
کتنا غم خوار بن گیا ہوں میں
ایک پتھر تھا ‘ اور اب ہیرا
میری سرکار ‘ بن گیا ہوں میں
سہل سمجھے تھے میرے یار مجھے
کارِ دُشوار بن گیا ہوں میں
حُسن کا کیا نشہ چڑھا اے ناز
سب سے بے کار بن گیا ہوں میں
*


کھوار منظوم تراجم
*
حُسنِ کردار بیتی اسوم اوا
یعنی تلوار بیتی اسوم اوا
تہ غیچھاری پیی اے جانِ من
ته بیمار بیتی اسوم اوا
اوا غمان وام گانیمان
کندوری غم خوار بیتی اسوم اوا
ای بوھرت اوشوتم وا ہانیسے ہیرا
مہ سرکار بیتی اسوم اوا
آسان جوشاوشتتانی مه یار مہ
کارِ دُشوار بیتی اسوم اوا
حُسنو کیہ نشہ ہوئے اے ناز
سفان ساری بے کار بیتی اسوم اوا

[email protected] | تحریریں

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

کشمیر کا انتباہی احتجاج

جمعرات مئی 16 , 2024
دوبارہ احتجاج کے خوف سے آزاد کشمیر میں ٹیلیفون کی سروس ابھی تک بند ہے۔ کشمیر میں خونریز احتجاج کے بعد بجلی کی قیمتوں میں
کشمیر کا انتباہی احتجاج

مزید دلچسپ تحریریں