اسحاق ساجد کی حمدیہ شاعری اور کھوار تراجم کا تجزیاتی مطالعہ

اسحاق ساجد کی حمدیہ شاعری اور کھوار تراجم کا تجزیاتی مطالعہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی*
(ورلڈ ریکارڈ ہولڈر)
[email protected]

اسحاق ساجد کی “دعائیہ انداز میں لکھا گیا حمدیہ کلام “الله رب العزت کے حضور ایک مودبانہ التجا پر مبنی اردو حمدیہ شاعری ہے جو شاعر کے روحانی سفر اور الله تعالیٰ سے دردمندانہ التجا کی عکاسی کرتی ہے۔ نظم الله تعالیٰ کے ساتھ گہرے تعلق کی تڑپ کا اظہار کرتے ہوئے رب کائنات سے رہنمائی، مدد اور بخشش کی التجا پر مبنی ایک شاہکار شاعری ہے۔ راقم الحروف (رحمت عزیز خان چترالی) کی کھوار زبان میں اس نظم کے ترجمے کا مقصد اسحاق ساجد کے حمدیہ کلام کا چترال، مٹلتان کالام اور گلگت-بلتستان کے وادی غذر میں بولی جانے والی زبان کھوار میں ایک مختلف لسانی اور ثقافتی تناظر میں محفوظ کرنا ہے۔

اسحاق ساجد کی حمدیہ شاعری اور کھوار تراجم کا تجزیاتی مطالعہ
اسحاق ساجد


اسحاق ساجد کے “حمدیہ کلام” کا مرکزی موضوع خالق اور مخلوق کے درمیان روحانی تعلق کا دلی اظہار اور رب کائنات سے التجائیہ اور دعائیہ کلام ہے۔ یہ شاعری شاعر کی روحانی نشوونما، دل کی پاکیزگی اور رب العزت کے ساتھ بامعنی تعلق کی خواہش پر زور دیتی ہے۔ شاعری کا تھیم آفاقی ہے، زبان اور ثقافتی رکاوٹوں سے بالاتر ہے، جو اسے شمالی پاکستان کی زبان کھوار میں ترجمہ کے لیے موزوں بناتی ہے۔
ساخت اور شکل کے لحاظ سے جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ اسحاق ساجد کی نظم 18 سطروں پر مشتمل ہے اور آزاد نظم کی ساخت کے مطابق شاعری ہے۔ آپ کی شاعری میں نظم کی کوئی سخت یا مشکل اسکیم نہیں ہے، جو نظم کو قارئین کے لیے مشکل بنادیتی ہو، یہ اشعار شاعر کے جذبات کے خلوص کو سمجھنے کی اجازت دیتے ہیں۔ راقم الحروف نے اپنے ترجمہ میں کھوار زبان میں نظم کی صداقت کو برقرار رکھتے ہوئے اس ساخت کو برقرار رکھنے کی بھرپور کوشش کی ہے۔


ادبی آلات کے لحاظ سے دیکھا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ اسحاق ساجد اپنے پیغام کو مؤثر طریقے سے قارئین تک پہنچانے کے لیے ” حمدیہ دعائیہ کلام” میں کئی ادبی آلات استعمال کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:
استعارہ:پانی کا استعارہ کے طور پر ڈوبنے اور بھنور کو زندگی کی افراتفری کی علامت کے طور پر استعمال کیا گیا ہے جیسے یہ اشعار ملاحظہ کیجئے۔
میں غرقِ آب ہوں مجھ کو اچھال دے یارب
بھنور کی زد سے مجھے تُو نکال دے یارب
امیجری: روح کی ہر سانس کا طواف کرنے اور کھلی جگہوں پر پرواز کرنے کی واضح تصویر نظم میں گہرائی کا اضافہ کرتی ہے۔
تکرار: لفظ “رب” کی تکرار شاعر کی التجا اور عقیدت پر زور دیتی ہے۔
انتشار: “مجھے دے دو” کی تکرار ایک تال اور سوچنے والا لہجہ پیدا کرتی ہے۔
علامت: “موم بتی” روشن خیالی اور رہنمائی کی علامت ہے، جبکہ “مردہ سیاہ راتیں”جہالت کی نمائندگی کرتی ہیں۔
اسحاق ساجد کے حمدیہ اشعار بہترین شاعری پر مبنی ایک بہترین تخلیق کے طور پر ہمارے سامنے ہیں جو شاعر کی روحانی نشوونما اور خدائی تعلق کی خواہش کو تلاش کرتی ہے۔ نظم کا آغاز رب کائنات سے ایک مودبانہ التجا کے ساتھ ہوتا ہے کہ شاعر کو زندگی کے ہنگاموں سے بچایا جائے، جس کی علامت پانی میں ڈوبنا ہے۔ یہ ابتدائی استعارہ پوری نظم کے لیے لہجہ متعین کرتا ہے، جہاں شاعر رہنمائی اور زندگی کے انتشار سے نکلنے کا راستہ تلاش کرتا ہے۔
روح کی ہر سانس کا طواف کرنے کا عمل روحانیت کی گہری سمجھ اور رب کائنات کے ساتھ تعلق کی تڑپ کو ظاہر کرتا ہے۔ ہمت، کمال اور روشن خیالی کے لیے بار بار کی جانے والی التجائیں شاعر کی روحانی ترقی کے لیے مخلصانہ جستجو کو ظاہر کرتی ہیں۔
کھلی جگہوں پر اڑنے کی تصویر کشی آزادی اور دنیاوی وجود کی پابندیوں سے آزاد ہونے کی خواہش کی نشاندہی کرتی ہے۔ موم بتی، روشنی اور تفہیم کی علامت کے طور پر، روشن خیالی کے لیے شاعر کی خواہش کی نشاندہی کرتی ہے۔
نظم چھٹکارا اور معافی کے تصور کو بھی چھوتی ہے، “مردہ کے گناہوں کو مستقل زوال” دینے کی درخواست کے ساتھ یہ ایمان کی تبدیلی کی طاقت اور روحانی طور پر مستحکم ہونے کے امکان کو اجاگر کرتا ہے۔
کھوار زبان میں راقم الحروف کے ترجمے کا مقصد بھی یہی ہے کہ اسحاق ساجد کے پیغام کے جوہر کو اردو کے علاوہ دیگر علاقائی زبانوں کے قارئین تک بھی پہنچایا جائے اور اسے مختلف لسانی اور ثقافتی تناظر میں ڈھالا جائے۔ نظم کے تھیم کی آفاقیت اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ اس کی گہرائی اور اہمیت کو وسیع تر قارئین کے ذریعے سراہا جا سکے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ اسحاق ساجد کی “دعائیہ حمدیہ کلام” ایک روحانی طور پر تخلیق شدہ اردو نظم ہے جو عقیدت، روشن خیالی اور تبدیلی کے موضوعات کو تلاش کرتی ہے۔ بہترین منظر کشی اور استعاراتی زبان کے ذریعے نظم شاعر کی الله تعالیٰ کے ساتھ قریبی تعلق کی گہری تڑپ کو بیان کرتی ہے۔ راقم الحروف (رحمت عزیز خان چترالی) کا کھوار ترجمہ شاعر کے اس طاقتور پیغام کو لسانی سرحدوں اور ثقافتی نزاکتوں سے بالاتر ہو کر وسیع تر قارئین تک پہنچاتا ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے اسحاق ساجد کا حمدیہ کلام مع کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔
*دعائیہ حمدیہ کلام *
٭٭٭
میں غرقِ آب ہوں مجھ کو اچھال دے یارب
بھنور کی زد سے مجھے تُو نکال دے یارب
کھوار:اوا اوغو غیری اسوم اے الله مہ پھار نیزے، اے الله تو مہ غیرناناری پھار نسی نیزے۔
طواف کرنے لگوں تیری ذات کا ہر دم
مجھے وہ طرز وہ حُسنِ خیال دے یارب
کھوار:اے الله ہر وخت تہ ذاتو طواہ کوریکا دوم، اے الله متے ہتے طھریقہ، ہتے حسن خیالو دیت۔
میں کر سکوں کوئی پرواز ان خلاؤں میں
مجھے وہ جرآت اور وہ کمال دے یارب
کھوار:اوا خلا دی کیہ قسمہ پرواز کورام، اے الله متے ہتے جرآت اوچے کھمال دیت۔
تُو نور بخش دے احساس کے چراغوں کو
مری سیاہ شبوں کو اجال دے یارب
کھوار:اے الله تو احساسو چراغانتے نور عطا کورے، مہ چھوئے چھوئیان روشت کورے۔
میں راہِ حق میں فروزاں رہوں تمام حیات
اک ایسی شمع کی صورت میں ڈھال دے یارب
کھوار:اے الله اوا صراط مستقیمہ ہمیش ثابت قدم بہچم پورا زندگی۔اے الله ای ہش شمعو صورتہ مہ رہنمائیو کورے۔
عروج بخش مری نیکیوں کو ہر لمحہ
مرے گناہوں کو دائم زوال دے یارب
کھوار:مہ نیکیانتے ہر لمحہ عروج عطا کورے، اے الله مہ گناہان ہمیشہ معاف کورے۔
مرے ضمیر کو ایماں کی وہ بلندی دے
کوئی جو دے تو مری ہی مثال دے یارب
کھوار:مہ ضمیروتے ایمانو ہش ژانگی دیت کہ اے الله کا کی لو پرائے مہ مثالو دیار۔
میں سر بہ سجدہ دعا کر رہا ہوں اب ساجد
ہمارے سر سے بلاؤں کو ٹال دے یارب
کھوار:ساجد سورو سجدا لاکھی ہنیسے دعا کورومان، اسپہ سورا گیاک بلاہان دودیری کورے۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

بچوں کی اخلاقی تعلیم و تربیت اور والدین کا کردار

جمعرات مارچ 21 , 2024
آج کل اگر دیکھا جائے تو ہر طرف بچوں کی اخلاقی تعلیم و تربیت کا فقدان نظر آتا ہے۔ جس کی سب سے بڑی وجہ والدین ہیں ۔
بچوں کی اخلاقی تعلیم و تربیت اور والدین کا کردار

مزید دلچسپ تحریریں