انجم عثمان کا افسانہ “ہانڈی” کا فنی و فکری جائزہ

انجم عثمان کا افسانہ “ہانڈی” کا فنی و فکری جائزہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی*
(ورلڈ ریکارڈ ہولڈر)
[email protected]

انجم عثمان کا افسانہ “ہانڈی” انسانی رشتوں کی پیچیدہ تہوں اور ان کے اندر موجود پیچیدگیوں کو بیان کرتی ہے۔ باورچی خانے کے پس منظر میں کہانی کا مرکزی کردار اپنی بیٹی کے ساتھ معمول کے مطابق فون پر بات چیت کرتے ہوئے کھانا تیار کرتے ہوئے سامنے آتا ہے۔ بظاہر دنیاوی ترتیب ایک ایسے مرحلے میں بدل جاتی ہے جہاں جذبات، جدوجہد اور طاقت کی حرکیات آپس میں مل جاتی ہیں۔
اس داستان میں مسعودہ، مرکزی کردار، اور اس کی دیرینہ ساتھیوں، آنٹی صغراں اور اس کی بیٹی آسیہ کی کہانی بنائی گئی ہے۔ اپنی بات چیت کے ذریعے انجم عثمان انحصار، وفاداری، اور وقار کی حرکیات سے پردہ اٹھاتی ہے۔ مسعودہ کا صغراں اور آسیہ کے ساتھ تعلق محض آجر اور ملازم کے رابطوں کی حدود سے ماورا نظر آتا ہے، جس میں شناسائی اور درجہ بندی کا امتزاج پایا جاتا ہے۔

اہم لمحہ اس وقت سامنے آتا ہے جب مصنفہ کو پتہ چلتا ہے کہ صغران خفیہ طور پر ایک معمولی سا کھانا کھا رہی ہے، جو ظاہری معمول کی سطح کے نیچے چھپی محرومی کی واضح حقیقت کو اجاگر کرتی ہے۔ بھوک برداشت کرنے کے باوجود صغراں کی اپنی عزت کو برقرار رکھنے کی بے چین کوشش مشکلات کے درمیان انسانی روح کی لچک کو سمیٹتی ہے۔

انجم عثمان کا افسانہ “ہانڈی” کا فنی و فکری جائزہ
انجم عثمان

انجم عثمان انسانی رویے کی باریکیوں اور طاقت کی حرکیات کی پیچیدگیوں کو تلاش کرتے ہوئے، نفسیاتی علاقے میں مہارت کے ساتھ تشریف لے جاتی ہے۔ یہ بیانیہ انسانی غرور کی نزاکت کو بے نقاب کرتا ہے اور لوگ اپنی قدر و قیمت کے احساس کو برقرار رکھنے کے لیے کس حد تک جاتے ہیں، یہاں تک کہ سنگین حالات میں بھی وہ حد سے گزر جاتے ہیں۔
کہانی کے اندر سرایت شدہ علامتوں کی آواز گہرائیوں سے گونجتی ہوئی سنائی دیتی ہے، کھانا پکانے کا برتن زندگی کے مصلی کے لیے ایک استعارہ کے طور پر کام کرتا ہے جہاں جدوجہد، قربانیاں اور خواہشات ایک دوسرے سے مل جاتی ہیں۔ کھانا پکانے کے برتن کی لینسز کے ذریعے انجم عثمان قارئین کو انسانی وجود کی پیچیدگیوں اور انسانی روح میں موجود لچک پر غور کرنے کی دعوت دیتی ہیں۔


افسانہ”ہانڈی” میں مصنفہ قارئین کو چیلنج کرتی ہے کہ وہ معاشرتی درجہ بندی، غربت اور انسانی تجربے کے بارے میں غیر آرام دہ سچائیوں کا سامنا کریں۔ انجم عثمان کی داستان خود شناسی کی دعوت دیتی ہے، اور قارئین کو انسانی رشتوں کی پیچیدگیوں اور مصیبت کے عالم میں وقار کے گہرے اثرات پر غور کرنے کی ترغیب دیتی ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ انجم عثمان کی “ہانڈی” محض ایک افسانوی کہانی کی حدود سے تجاوز کرتی ہے، جو قارئین کو انسانی حالت کی ایک پُرجوش تحقیق پیش کرتی ہے۔ مختصر کردار نگاری اور فکر انگیز کہانی سنانے کے ذریعے، انجم عثمان نے لچک، وقار، اور پیچیدگیوں پر روشنی ڈالی ہے جو انسانی تجربے کی وضاحتیں پیش کرتی ہیں۔ جب قارئین انجم عثمان کے افسانے “ہانڈی” کا مطالعہ کرکے مسعودہ کے باورچی خانے کی راہداریوں میں سفر کرتے ہیں، تو ان کا سامنا گہری سچائیوں سے ہوتا ہے جو آخری صفحہ پلٹنے کے کافی عرصے بعد بھی قارئین کے دلوں میں نقش ہوجاتے ہیں۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

رحمت عزیز خان چترالی

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

Next Post

نیکولا ٹیسلا کی طلسماتی شخصیت اور کردار

منگل مارچ 19 , 2024
امریکی سربیئن سائنس دان نیکولا ٹیسلا کے بارے کہا جاتا ہے کہ ان کی یادداشت جادوئی قسم کی تھی۔ وہ کسی کتاب کو ایک بار پڑھتے تھے
نیکولا ٹیسلا کی طلسماتی شخصیت اور کردار

مزید دلچسپ تحریریں