منقبت حضرت علی اصغر علیہ السلام

Ali Asghar AS

نور کی شاخِ دلربا اصغرؑ

دین پر ہو گیا فدا اصغرؑ

نامِ اصغر کو پھونک کر دیکھا

ننھے بچوں کی ہر دوا اصغرؑ

ایک مغموم حوصلے سے وہ

سب سے آگے نکل گیا اصغرؑ

تیرِ حرمل جو کھا کے گردن پر

چار سو کر گیا ضیا اصغرؑ

دے کے اپنا لہو وہ کربل کو

لخلخہ کر گیا فضا اصغرؑ

تیر ڈالا کماں میں حُرمل نے

تو سکینہ نے دی صدا اصغرؑ

دفن کر کے زمینِ کربل میں

رو دیا “صبر کا خدا” اصغرؑ

جس سے روشن خدا کا مذہب ہے

کبریا کا ہے وہ دیا اصغرؑ

دینِ مرسل پہ شیر خواروں میں

جان دینے کی ابتدا اصغرؑ

کیا وفا مصطفٰیؐ سے ہوتی ہے؟

کربلا میں دکھا گیا اصغرؑ

میرا قائم سلام ہے اُس پر

تشنہ لب جو فدا ہوا اصغرؑ

hubdar qaim

سیّد حبدار قائم

آف غریب وال، اٹک

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١1989 میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

منقبت بحضور حضرت عباس علمدار علیہ السلام

منگل اگست 17 , 2021
آل نبیؐ کے گھر کی حفاظت تمہی سے تھی ہر پل یزیدیوں کی عداوت  تمہی سے تھی
light art vintage architecture