خالد اسراں کا افسانہ ‘عید’: منقطع روایات کی کہانی

خالد اسراں کا افسانہ ‘عید’: منقطع روایات کی کہانی

خالد اسراں کا اردو افسانہ ‘عید’ منقطع روایات کی دلچسپ اور سبق آموز کہانی ہے جس میں مصنف نے شاہد نامی لڑکے کی سفر کے حالات و واقعات کو بیان کیا ہے، ایک محنتی اور تعلیم یافتہ لڑکا جو کینیڈا میں بہتر مواقع کی تلاش میں اپنا وطن پاکستان چھوڑ کر چلا جاتا ہے۔ کینیڈا میں کامیابی حاصل کرنے کے بعد شاہد نے عید منانے کے لیے پاکستان واپس آنے کا فیصلہ کیا وہ یہ سفر صرف یہ معلوم کرنے کے لیے کیا کہ تہوار کی روایات اور خوشی کا جذبہ بالکل بدل گیا ہے یا نہیں۔ کہانی شاہد کی مایوسی اور ناامیدی کو سامنے لاتی ہے کیونکہ وہ اپنے آبائی شہر میں عید کے ختم ہوتے ہی ثقافتی اور فرقہ وارانہ پہلوؤں کا مشاہدہ کرتا ہے۔


‘افسانہ عید’ کا مرکزی موضوع معاشی مشکلات اور سماجی تبدیلیوں کی وجہ سے ثقافتی اور روایتی اقدار کے زوال کے گرد گھومتا ہوا نظر آتا ہے۔ خالد اسراں نے عید کے ایک بار متحرک اور جشن کے ماحول پر مہنگائی، بے روزگاری اور جدیدیت کے اثرات کو اپنے افسانے میں پیش کیا ہے۔ کہانی فرقہ وارانہ جذبے کے نقصان اور سماجی و اقتصادی حرکیات کو بدلنے کی وجہ سے نسلوں کے درمیان تعلقات منقطع ہونے کی عکاسی کرتی ہے۔
افسانہ ”عید ” کی کہانی کو ساخت اور تھیم کے لحاظ سے جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ افسانہ ‘عید’ کا بیانیہ شاہد کے خاندانی پس منظر، کینیڈا میں اس کی کامیابی اور پاکستان واپسی کے فیصلے سے شروع ہوتا ہے۔ اس کے بعد کہانی شاہد کے اپنے آبائی شہر میں عید کی تقریبات کی عصری حالت کے مشاہدات کے ذریعے سامنے آتی ہے۔ اس کی پرانی یادوں اور تلخ حقیقت کے درمیان بالکل تضاد افسانے کے پلاٹ کی جڑ ہے۔ اسراں نہایت مہارت کے ساتھ داستان کو ایک منفرد اسلوب میں بیان کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے، جو قاری کو ثقافتی تبدیلیوں اور سماجی زوال کی پُرجوش تلاش کے ساتھ پیش کرتا ہے۔
خلد اسراں نے افسانہ ”عید” کی کہانی کی جذباتی گہرائی کو قارئین تک پہنچانے کے لیے مختلف ادبی آلات کا بھی استعمال کیا ہے۔ پاکستان میں ماضی کی عید کی تقریبات کو واضح طور پر پیش کرنے کے لیے امیجری کا استعمال کیا جاتا ہے، جو ان کے موجودہ حالات سے متصادم ہے۔ “زندہ لوگوں کا قبرستان” اور “انسانی شکل میں کالے جنات” جیسے استعارے روایت کے کھو جانے اور معاشرتی تبدیلیوں کے غیر انسانی اثرات پر زور دیتے ہوئے علامت کی ایک تہہ شامل کرتے ہیں۔
افسانہ ‘عید’ کا تفصیلی تجزیہ کرنے سے پتہ چلتا ہے کہ یہ افسانہ ثقافتی طریقوں پر جدیدیت کے اثرات پر تنقید کرنے کے مصنف کے ارادے کو ظاہر کرتا ہے۔ سنگین حقیقت کے مقابلے میں شاہد کی توقعات کی تفصیل کمیونٹی کو درپیش وسیع تر سماجی و اقتصادی چیلنجوں کا استعارہ ہے۔ روایتی سرگرمیوں کی عدم موجودگی، جیسے سوئی کا کام، فرقہ وارانہ اجتماعات میں کمی، اور تہواروں کی تجارت کاری، ثقافتی بندھنوں کے ٹوٹنے کی علامت ہے۔
شاہد کا اپنے ایک زمانے میں مانوس پڑوس کی تلخ حقیقتوں سے ملاقات ایک بہترین اور سچ پر مبنی کہانی کو سامنے لاتی ہے۔ یہ کہانی عصری زندگی کے دباؤ کے درمیان ثقافتی ورثے کے تحفظ کی اہمیت پر روشنی ڈالتی ہے۔کہانی کا بیانیہ قارئین کو دعوت دیتا ہے کہ وہ روایات، برادری کی اہمیت اور انفرادی شناخت پر سماجی تبدیلیوں کے اثرات پر غور کریں۔


خلاصہ کلام یہ ہے کہ خالد اسراں کا افسانہ ‘عید’ اقتصادی چیلنجوں اور جدیدیت کے تناظر میں ثقافتی روایات کے ابھرتے ہوئے منظر نامے پر ایک پُر اثر تنقیدی تبصرہ ہے۔ شاہد کے سفر کے ذریعے مصنف نے قارئین کو ثقافتی ورثے کی نزاکت اور عید جیسے تہوار کے جوہر کو محفوظ رکھنے کے لیے اجتماعی کوششوں کی ضرورت پر غور کرنے کی ترغیب دی ہے۔ اسراں نے بڑی مہارت کے ساتھ کہانی سنانے کو سماجی تنقید کے ساتھ جوڑ کر ایک زبردست بیانیہ تخلیق کیا ہے۔ میں مصنف کو اتنی شاندار کہانی تخلیق کرنے پر مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

آنریری کیپٹن راجہ ارشاد حسین

جمعرات مئی 30 , 2024
آنریری کیپٹن ارشاد حسین 15 ستمبر 1938ء کو تحصیل و ضلع چکوال کے گاؤں تاسہ موہڑہ میں پیدا ہوئے
آنریری کیپٹن راجہ ارشاد حسین

مزید دلچسپ تحریریں