فاکہہ قمر کا افسانہ “آخر کیوں؟”

فاکہہ قمر کا افسانہ “آخر کیوں؟” کا فنی و فکری جائزہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی*

فاکہہ قمر کا افسانہ “آخر کیوں؟” بہترین معاشرتی افسانہ ہے جس میں معاشرتی اصولوں اور اندرونی کمتری کے خلاف عورت کی جدوجہد کی ایک پُرجوش کہانی کو بیان کیا گیا ہے۔ فری کی داستان اور فرہاد کے ساتھ اس کے جابرانہ تعلقات کے ذریعے، فاکہہ قمر خود قدر، خواہش اور صنفی حرکیات کے موضوعات پر روشنی ڈالتی ہے۔ یہ افسانہ خواتین کو درپیش معاشرتی دباؤ اور ان کی اکثر نظر انداز کی جانے والی صلاحیتوں پر ایک اہم تنقیدی تبصرہ ہے۔
افسانہ “آخر کیوں؟” میں مصنفہ شک سے خود شناسی تک عورت کے سفر کا تہہ دار تجزیہ پیش کرتی ہوئی دکھائی دیتی ہیں۔ فری، مرکزی کردار، بہت سی خواتین کی جدوجہد کو سامنے لاتی ہے جو اپنے عزیزوں کی طرف سے مسلسل کمزور ہونے کی وجہ سے خود اعتمادی کے مسائل سے دوچار ہوتی ہیں۔ کہانی فری کی نفسیات پر بچپن کی عدم تحفظ اور سماجی توقعات کے اثرات کو واضح کرتی ہے۔ فرہاد کا حقیر اور حقارت آمیز رویہ فری کی حتمی بات اور اس کے عزائم کے دعوے کے لیے ایک عبرت کا کام کرتا ہے۔

فاکہہ قمر کا افسانہ “آخر کیوں؟”


کہانی کا بیانیہ لکیری ہے، بنیادی طور پر مصنفہ نے فری کے اندرونی تنازعات اور ترقی پر توجہ مرکوز کی ہے۔ کہانی میں اہم موڑ تب آتا ہے جب فری کو ایک ریڈیو اسٹیشن سے نوکری کی پیشکش موصول ہوتی ہے—ایک خواب جسے اس نے بچپن سے اپنے دل میں پالا تھا۔ اس موقع پر فرہاد کا منفی ردعمل نہ صرف فری کی امنگوں بلکہ اس کے احساسِ نفس کے لیے، ایک مخالف کے طور پر اس کے کردار کو واضح کرتا ہے۔ انتہا اس وقت پہنچ جاتی ہے جب فری، اپنی حالت پر غور کرتے ہوئے، اپنے خوابوں کو اپنے جابرانہ رشتے پر ترجیح دینے کا فیصلہ کرتی ہے۔
تنقیدی تناظر کے لحاظ سے جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ فاکہہ قمر کا افسانہ پدرانہ ذہنیت کا تنقیدی جائزہ پر مبنی کہانی ہے جو خواتین کی خواہشات کو کم اہمیت دیتی ہے۔ فرہاد ایک سماجی آرکیٹائپ کی نمائندگی کرتا ہے جو خواتین کو فطری طور پر کم صلاحیت کے طور پر دیکھتا ہے۔ ان کے تضحیک آمیز تبصرے صرف ذاتی حملے نہیں ہیں بلکہ خواتین کی آزادی اور کامیابی کے لیے ایک وسیع تر ثقافتی نفرت کی بازگشت کے طور پر سنائی دیتی ہیں۔ یہ افسانہ ان معاشرتی ڈھانچے کے بارے میں اہم سوالات اٹھاتا ہے جو صنفی عدم مساوات اور جذباتی ہیرا پھیری کو برقرار رکھتے ہیں۔
کہانی میں مصنفہ خواتین سے متوقع جذباتی مشقت پر بھی تنقید کرتی ہیں۔ فرہاد کے طعنوں کے سامنے فری کی خاموشی ان بوجھوں کو نمایاں کرتی ہے جو اکثر خواتین اپنے رشتوں میں ہم آہنگی برقرار رکھنے کے لیے اٹھاتی ہیں۔ فاکہہ قمر کا بیانیہ واضح طور پر ان حرکیات کا از سر نو جائزہ لینے کا مطالبہ کرتا ہے، جو خواتین کی صلاحیتوں اور خوابوں کو جائز اور قابل تعاقب کے طور پر تسلیم کرنے کی وکالت کرتا ہے۔
اسلوبی خوبصورتی کے لحاظ سے جائزہ لینے سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ فاکہہ قمر ایک سیدھی سادھی لیکن فکر فکر نثر تخلیق کرتی ہیں۔ اس کی زبان قابل رسائی ہے، جو افسانہ کو وسیع قارئین کے لیے قابلِ رشک بناتی ہے۔ مکالمے تیز ہونے کے ساتھ ساتھ کسی کا غم و غصہ بھی ظاہر کرنے والے ہیں، جو فری اور فرہاد کے درمیان کشیدگی کو مؤثر طریقے سے گرفت میں لے رہے ہیں۔ بیانیہ کی آواز ہمدردی پر مبنی ہے اور مصنفہ قارئین کو فری کی اندرونی دنیا اور اس کے جذباتی ہنگاموں کی طرف کھینچتی ہے۔
افسانہ کے آخر میں بیاناتی سوالات کا استعمال – “آخر کیوں؟”—ایک طاقتور اسٹائلسٹک ڈیوائس کے طور پر کام کرتا ہے۔ یہ مایوسی اور حل نہ ہونے والے سوالات کو سمیٹتا ہے جو بہت سی خواتین کی زندگیوں کو متاثر کرتے ہیں۔ یہ تکرار نہ صرف افسانہ کے موضوعاتی خدشات پر زور دیتی ہے بلکہ قاری پر دیرپا اثر بھی چھوڑتی ہے، جس سے بیانیہ میں بیان کیے گئے نظامی مسائل پر غور و فکر کرنے کا اشارہ ملتا ہے۔
فکری طور پر فاکہہ قمر اپنے افسانہ “آخر کیوں؟” میں روایتی صنفی کرداروں کو چیلنج کرتی ہوئی دکھائی دیتی ہیں، اور خواتین کی خودمختاری کی وکالت کرتی ہیں۔ اپنی کہانی کے ذریعے مصنفہ حقوق نسواں کی گفتگو میں مشغول نظر آرہی ہیں۔ اس افسانے کو اس بڑی تحریک نسواں کے مائیکرو کاسم کے طور پر دیکھا جا سکتا ہے جو پدرانہ ڈھانچے کو ختم کرنا چاہتی ہے۔ فرہاد کی مخالفت کے باوجود فری کا اپنے خوابوں کو پورا کرنے کا فیصلہ روایتی توقعات سے ہٹ کر انفرادی لوگوں کے دعوؤں کی علامت ہے۔
فاکہہ قمر اپنے افسانہ “آخر کیوں؟” میں شک اور اعتماد کے نفسیاتی پہلوؤں پر غور کرنے کی دعوت بھی دیتی ہوئی نظر آتی ہیں۔ بیانیہ خود اعتمادی کی اہمیت اور اندرونی منفی سوچ کی تباہ کن طاقت کو واضح کرتا ہے۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ خواتین کے لیے حقیقی آزادی صرف بیرونی توثیق سے ہی نہیں بلکہ خود ادراک میں داخلی تبدیلی سے حاصل ہوتی ہے۔


خلاصہ کلام یہ ہے کہ فاکہہ قمر کا افسانہ “آخر کیوں؟” خود کو بااختیار بنانے کی طرف عورت کے سفر کا ایک بہترین معاشرتی کہانی ہے۔ صنفی حرکیات اور اس کے اسلوبیاتی نفاست کی تنقیدی جانچ کے ذریعے مصنفہ نے اپنے افسانہ “آخر کیوں؟” میں ایک زبردست بیانیہ پیش کیا ہے جو حقوق نسواں پر لکھا جانے والا بہترین افسانہ ہے۔ اس افسانے کے ذریعے مصنفہ خواتین کے اندر موجود صلاحیتوں کو پہچاننے اور پروان چڑھانے کا مطالبہ کرتی ہیں اور معاشرے پر زور دیتی ہیں کہ وہ اپنے آپ سے یہ پوچھنے کی جسارت کریں کہ خواتین کو اب بھی کیوں پیچھے رکھا جاتا ہے اور اس رواج کو تبدیل کرنے کے لیے کیا کیا جا سکتا ہے؟۔ میں مصنفہ کو اتنی اچھی کہانی تخلیق کرنے پر مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

تبصرہ :۔ میرے لفظ

جمعہ جون 7 , 2024
سید حبدار قائم صاحب کی وساطت سے ادبی مجلہ میرے لفظ ( جنوری تا جون 2024 ء ) دیکھنے اور پڑھنے کا اتفاق ہوا۔
تبصرہ :۔ میرے لفظ

مزید دلچسپ تحریریں