جائیں تو جائیں کہاں؟

تجزیاتی تحریر :

سیدزادہ سخاوت بخاری

عجیب دور مصیبت ہے ، بندہ کیا کرے اور کیا نہ کرے ۔

سنی ( بریلوی )

بنو تو ۔۔۔۔.۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔  مشرک کہلاو

وھابی ، دیوبندی بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گستاخ کہلاو

شیعہ بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کافر کہلاو

ن کی حمائت کرو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پٹواری کہلاو

پی پی میں جاو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لٹیرے کہلاو

جمعیت کا ساتھ دو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈیزل کہلاو

سرخ پوش بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   غدار کہلاو

پی ٹی آئی میں جاو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یوتھئے کہلاو

ایم کیو ایم کا نام لو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انڈیا کے ایجنٹ کہلاو

جماعت کا ساتھ دو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جماعتیئے کہلاو

تاجر بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ذخیرہ اندوز کہلاو

سرکاری نوکری کرو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رشوت خور کہلاو

سیاست دان بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جھوٹے کہلاو

پیر فقیر بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹھگ کہلاو

دودھ دہی بیچو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملاوٹ والے

ڈاکٹر بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قصائی کہلاو

جج بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نا انصاف کہلاو

فوجی بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خلائی مخلوق

گھریلو ملازم بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  کام چور کہلاو

بیوی بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زبان دراز کہلاو

خاوند بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نکھٹو کا خطاب

بہو بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قبضہ گروپ

شاعر ادیب بنو

تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قلم فروش

حاکم بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ظالم کہلاو

بیوی کی مانو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  رن مرید

ماں کی مانو

تو ……………………۔ لائی لگ

باقاعدگی سے مسجد جاو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مسیتل

مسجد نہ جاو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  لفنگا

ٹائی سوٹ پہنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انگریز

شلوار قمیص پہنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پینڈو

داڑھی رکھو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مولوی

مونچھیں بڑھاو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مچھندر

کلین شیو بنو

تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گورا

مختصر یہ کہ دنیاء کسی حال میں جینے نہیں دیتی ۔ یہ سب کچھ لکھتے ہوئے ایک کہانی یاد آگئی ۔

ہوا یوں کہ ایک صاحب گدھا فروخت کرنے کے لئے مویشی منڈی جارہے تھے ۔ جاتے ہوئے چھوٹے بیٹے کو بھی ساتھ لے لیا تاکہ سیروتفریح کر آئے ۔ گاوں سے باھر نکلے تو دونوں گدھے پر سوار ہوگئے ۔ سامنے سے کچھ لوگ آرہے تھے ۔ قریب آئے تو نہائت افسوس کا اظھار کرتے ہوئے دونوں باپ بیٹے کو لعن طعن کی اور کہا شرم نہیں آتی اس حیوان مال پر دو بندے سوار ہو ۔ باپ نے معذرت کی اور خود گدھے سے اتر کر پیدل چلنے لگا ۔ تھوڑی دور گئے تھے کہ ایک گروہ سے سامنا ہوا ۔ انہوں نے لڑکے سے مخاطب ہوکر کہا شرم کرو بوڑھا باپ پیدل چل رہا ہے اور تم گدھے پہ سوار ہو ۔ لڑکے نے سوری کیا اور خود اتر کر باپ کو گدھے پر سوار کرادیا ۔ کچھ ہی دیر گزری تھی کہ کچھ لوگوں سے پھر سامنا ہوا ۔ وہ باپ سے مخاطب ہوکر کہنے لگے شرم کرو چھوٹا سا بچہ پیدل جارھا ہے اور تم گدھے پر بیٹھے ہو ۔ عجیب صورت حال کا سامنا تھا ۔ دونوں سوار ہوں تو اعتراض ، باپ بیٹا اکیلے سواری کریں تو ناجائز ۔ اس صورت حال سے تنگ آکرفیصلہ کیا گیا  کہ دونوں پیدل چل کر جائینگے ۔ ابھی کچھ ہی مسافت باقی تھی کہ پھر سے ایک گروہ دانشوراں سے واسطہ پڑا ۔ وہ انہیں پیدل دیکھ کر تمسخرانہ انداز میں گویا ہوئے ۔ ارے کم بختوں اس موٹے تاذے جانور کے ہوتے ہوئے پیدل چل رہے ہو تم سے بڑا احمق کون ہوگا ۔ ابھی یہ اعتراضات اور مشورے جاری تھے کہ سفر ختم ہوا اور وہ بالآخر منڈی تک جا پہنچے ورنہ نہ جانے مزید کیا کیا باتیں سننے کو ملتیں ۔

قصہ مختصر ، یہ دنیاء کسی حال ، حالت اور کیفیت میں چین سے جینے نہیں دیتی لھذا ایسی ہی کیفیات کو بھانپتے ہوئے کسی دانشور نے کہا تھا،

زندگی کے سفر میں جا بجا ہر موڑ پر کھڑے کتے بھونک رہے ہوتے ہیں اور اگر آپ رک رک کر انہیں پتھر مارتے رہے تو منزل پر کیسے اور کب پہنچیں گے ۔ بہتر  ہے کان لپیٹ کر تیز تیز قدموں سے چلتے جائیں ورنہ

دوسروں کی طرح آپ بھی کہیں گے

جائیں تو جائیں کہاں 

دنیاء تو چلنے ہی نہیں دیتی ۔

SAS Bukhari

سیّدزادہ سخاوت بخاری

سیّد زادہ سخاوت بخاری

شاعر،ادیب،مقرر شعلہ بیاں،سماجی کارکن اور دوستوں کا دوست

Next Post

قیامت کے ہولناک مناظر

جمعہ نومبر 5 , 2021
تاروں کا بکھرنا اور بے نور ہونا آسماں کی وسعتوں میں ایک عجیب سماں کی کیفیت کا نام ہے کیونکہ جب آسمان پر ستارے بکھریں گے تو یہ آپس میں ٹکرائیں گے ان سے جو آواز
end-of-admoria