معراج کی شب چرخِ خالق نے جِلا پائی

معراج کی شب چرخِ خالق نے جِلا پائی

پر نور ستاروں نے پُرکیف  ادا پائی

 جبریلؑ جہاں ڈر تے، سدرہ پہ کہا ربّ نے

محبوبِ خدا آؤ، آقؐا نے صدا پائی

آقؐا کی گزارش نے معراج کی شب! لوگو

امت کی لیے ربّ سے بخشش کی عطا پائی

اُڑتے ہوئے جنت کے دیکھے ہیں نظارے بھی

آقاؐ سے سواری نے مہمیز ادا پائی

بخشش میری امت کی کر دینا قیامت کو

معراج کی شب، رب نے احمؐد کی دعا پائی

بس دو ہی کمانوں پہ محبوب ملا ربّ سے

قوسین کی قربت بھی آنکھیں نہ ہٹا پائی

جب نور نظر آیا اُس نور کے پردے سے

مازاغ بصارت نے اک لطفِ ضیا پائی

سرکار نے امت کی رفعت کے لیے قائم

بے مثل شفاعت سے بخشش کی ردا پائی

سید حبدار قائم آف اٹک

حبدار قائم

سیّد حبدار قائم

اٹک

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١1989 میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

سینیٹر مرزا محمد آفریدی

ہفتہ مارچ 13 , 2021
سینیٹر مرزا محمد آفریدی کا تعلق خیبر پختونخوا کے قبائلی ضلع خیبر میں تحصیل باڑہ کے سپاہ قبیلے سے ہے۔
SAS Bukhari