فضاء فانیہ کی دعائیہ اسلوب کی شاعری

فضاء فانیہ کی دعائیہ اسلوب کی شاعری

فضاء فانیہ ایک قابل ذکر ہندوستانی شاعرہ ہیں جو اپنے خوبصورت اشعار کی وجہ سے مشہور ہیں آپ کی شاعری میں جابجا دعائیہ عناصر پائے جاتے ہیں، انہوں نے اپنی شاعری میں روحانیت اور خود شناسی کے موضوعات کو کثرت سے شامل کیا ہے، اپنی ایک دعائیہ نظم میں فضاء فانیہ نے دعا کی شکل کو مرکزی عنصر کے طور پر اپنی شاعری میں استعمال کیا ہے، جو قارئین کو خود کی عکاسی اور الٰہی تعلق کے سفر میں رہنمائی کرتا ہے۔


آپ کی شاعری میں بار بار گریز “تیرے در پر آئی” ایک پُرجوش دعا کے طور پر کام کرتا ہے، جو روحانیت کی دہلیز پر سکون اور چھٹکارے کی تلاش کے عمل کی علامت ہے، یہ استعاراتی اسلوب ماورائی ہونے کے لئے ایک امید کی نمائندگی کرتا ہے، جو افراد کو اپنی باطنی جدوجہد کا مقابلہ کرنے اور الٰہی حضوری کے سامنے ہتھیار ڈالنے کی دعوت دیتا ہے۔
مختصر لیکن گہرے اشعار کے ذریعے فضاء فانیہ نے دعا کے مختلف پہلوؤں پر روشنی ڈالی ہے، ہر شعر ایک منفرد غور و فکر کو سامنے لاتا ہے جیسے۔ “شرم سے اپنا سر جھکانا” اور “خود کو بیدار کرنے کے لئے” کی سطریں روشن خیالی کی جستجو کے ساتھ عاجزی کو جوڑتی ہیں، اور قارئین کو روحانی بیداری کے لئے کوشش کرتے ہوئے اپنی کوتاہیوں کا مقابلہ کرنے کی تلقین کرتی ہیں۔
مزید برآں فضاء فانیہ ہمدردی اور بے حسی کے درمیان فرق کو دور کرنے کی کوشش کرتی ہوئی دکھائی دیتی ہیں اور مصائب و مشکلات کے عالم میں انسانی رویے کی متضاد نوعیت پر افسوس کا اظہار کرتی ہیں۔ “درد کو سننے کے بعد بھی، لوگ یہاں لطف اندوز ہوتے ہیں” یہ شعر ہمدردی اور عمل کے درمیان تعلق کو واضح کرتا ہے اور بے حسی سے دوچار دنیا میں حقیقی ہمدردی کی ضرورت کو اجاگر کرتا ہے۔
“چار سو سے” پھیلے ہوئے اندھیرے کی منظر کشی اور “تقویٰ کی شمع جلانے” کا استعارہ روحانی ویرانی اور مشکلات کے درمیان روشن خیالی کے لئے پائیدار جدوجہد کو جنم دیتا ہے، فضاء فانیہ نے مہارت سے روحانی روشنی کے موضوعات کو ماضی کی سرکشیوں کے بوجھ کے ساتھ جوڑنے کی کوشش کی ہے، جس کی علامت اس لائن سے واضح ہوتی ہے “میں اپنی خطاؤں سے بوجھل ہوں۔”
مزید برآں فضاء فانیہ قربانی اور وفاداری کو خراج عقیدت پیش کرتی ہیں، خاص طور پر راہِ خدا میں اپنی جانیں قربان کرنے کے حوالے سے اشعار بھی آپ کی شاعری میں شامل ہیں۔ قربانی کے لئے یہ تعظیم ایمان اور عقیدت کے درمیان گہرے بندھن کی نشاندہی کرتی ہے، اور روحانی تکمیل کے لئے دنیاوی وابستگیوں کو ترک کرنے کی خواہش پر زور دیتی ہیں۔
نظم کے آخری حصے میں فضاء فانیہ اپنی توجہ ذاتی چھٹکارے اور اندرونی انتشار سے نجات کی طرف مبذول کراتی ہیں۔ “فنا و تباہ جہان کی رونق کو کہاں چھوڑا ہے” اور “میں آپ کو اپنے دل میں بسانے کے لئے دروازے پر آئی ہوں” اندرونی سکون اور مفاہمت کی آرزو کی عکاسی کرتے ہیں، جو خود قبولیت اور خدائی فضل کی طرف ایک تبدیلی کا سفر تجویز کرتے ہیں۔
مناجات کا اختتام خود خواہش اور انا کے طوق سے نجات کی التجا کے ساتھ ہوتا ہے، جس کا مظہر “خود کو ذلت سے بچاؤ” میں دکھائی دیتا ہے۔ یہ پُرجوش اپیل روحانی طور پر ہتھیار ڈالنے کے جوہر کو سمیٹتی ہے اور لوگوں پر زور دیتی ہے کہ وہ اپنی خواہشات سے بالاتر ہو جائیں اور الہٰی راستے کے طور پر عاجزی کو اپنا لیں۔
خلاصۂ کلام یہ ہے کہ فضاء فانیہ کی دعائیہ شاعری محض شاعرانہ اظہار سے بالاتر ایک بہترین دعا بھی ہے، جو قارئین کو دعا، التجا، اور روحانی روشن خیالی کی ابدی جستجو کی نوعیت پر عمل کرنے کی دعوت دیتی ہے، اپنی فکر انگیز منظر کشی اور خود شناسی والے اشعار کے ذریعے فضاء فانیہ ایمان کی پائیدار طاقت اور انسانی تجربے کی پیچیدگیوں کو نیویگیٹ کرنے میں دعا کی صلاحیت کے لازوال ثبوت کے طور پر کام کرتی ہیں، اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لئے فضاء فانیہ کی شاعری سے اقتباس پیش خدمت ہے!
*
اے خدا تجھ کو منانے۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی
شرم سے سر کو جھکانے۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

خوابِ غفلت میں کٹی عمر مری لیکن اب
خود کو بیدار کرانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

درد سن کر بھی یہاں لوگ مـزے لیتے ہیں
حالِ دل اپنا سنانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

چار سو سے مجھے گھیرا ہے شبِ ظلمت نے
شمعِ تقویٰ کو جلانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

بوجھ سے اپنی خـطاؤں کے دَبی جاتی ہوں
بارِ عِصیاں کو ہٹانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

کردوں قربان تری رَہ میں سبھی کچھ اپنا
اپنی یہ جاں بھی لُٹانے۔۔۔۔ ترے در پر آئی

رونقِ دارِ فنا زیـبِ جہـاں چھوڑ چکی
تجھ کو اب دل میں بسانے ترے در پر آئی

خواہشِ نفس نے رسوا ہی کیا ہے مجھ کو
خود کو ذلت سے بچانے۔۔۔۔۔ ترے در پر آئی

Title Image by Himsan from Pixabay

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

مصطفیٰ خان شیفتہ کی غزل کا تنقیدی مطالعہ

بدھ جون 5 , 2024
نواب مصطفیٰ خان شیفتہ کا شمار جہانگیر آباد دہلی کے جاگیردار، اور اردو فارسی کے ممتاز شعرا اور نقادوں میں ہوتا ہے۔
مصطفیٰ خان شیفتہ کی غزل کا تنقیدی مطالعہ

مزید دلچسپ تحریریں