مصطفیٰ خان شیفتہ کی غزل کا تنقیدی مطالعہ

مصطفیٰ خان شیفتہ کی غزل کا تنقیدی مطالعہ

رحمت عزیز خان چترالی٭

نواب مصطفیٰ خان شیفتہ کا شمار جہانگیر آباد دہلی کے جاگیردار، اور اردو فارسی کے ممتاز شعرا اور نقادوں میں ہوتا ہے۔ ان کی علمی خدمات میں الطاف حسین حالی کو مرزا غالب سے متعارف کرانا شامل ہے۔ دہلی میں ان کے نام سے ایک بڑی لائبریری تھی، جو 1857ء کی بغاوت کے دوران باغیوں نے لوٹ کر نذر آتش کر دی۔ انگریزوں نے بغاوت کے شبے میں انہیں سات سال کی قید کی سزا سنائی، مگر نامور عالم نواب صدیق حسن خان کی سفارش پر انہیں معافی مل گئی اور ان کی پنشن مقرر کی گئی۔

نواب مصطفیٰ خان شیفتہ کے خاندان میں ان کے بیٹے نواب اسحاق خان اور پوتے نواب محمد اسماعیل خان شامل تھے۔ نواب محمد اسماعیل خان 1883ء میں آگرہ میں پیدا ہوئے، کیمبرج یونیورسٹی انگلستان سے بار ایٹ لا کیا اور وطن واپس آ کر تحریک خلافت میں حصہ لیا۔ انہوں نے یو پی خلافت کانفرنس کے چیف آرگنائزر کی حیثیت سے نمایاں خدمات انجام دیں۔ بعد میں ان کے پوتے نواب محمد اسماعیل خان آل انڈیا مسلم لیگ کے سرکردہ سیاستدان بنے۔

نواب مصطفیٰ خان شیفتہ کی تصانیف “گلشنِ بے خار” اور “تقریظ: غالب پر تعریفی تنقید” ان کی ادبی بصیرت اور شعری مہارت کا بہترین نمونہ ہیں۔آپ نے ایسی شاعری تخلیق کی ہے جو گہرے جذباتی اور فکری لہجے کے ساتھ قارئین میں مقبول ہیں۔ ان کی غزل کا یہ شعر”اٹھ صبح ہوئی مرغ چمن نغمہ سرا دیکھ” ان کی شاعرانہ ذہانت کا ثبوت ہے، جس میں خوبصورتی، مایوسی، فخر اور وجودی عکاسی کے موضوعات کو شامل کیا گیا ہیں۔ آج کا یہ کالم مصطفٰی خان شیفتہ کی غزل کی پیچیدہ تہوں کا احاطہ کرنے کے ساتھ ساتھ اس کی شاعری میں شامل ادبی آلات، موضوعاتی فراوانی اور ثقافتی اہمیت کے بارے میں ہے ۔ غزل کے ابتدائی شعر میں کہتے ہیں کہ

اٹھ صبح ہوئی مرغ چمن نغمہ سرا دیکھ

نور سحر و حسن گل و لطف ہوا دیکھ

شاعر غزل کا آغاز طلوع فجر کی ایک فکر انگیز تصویر کشی کے ساتھ کرتا ہے، جو قاری کو فطرت کی ہم آہنگی کا مشاہدہ کرنے کی ترغیب دیتا ہے۔ “مرغ چمن” یعنی باغ کا پرندہ کا استعاراتی مثال بیداری اور نئی شروعات کی علامت کے طور پر غزل میں شامل کیا گیا ہے، جب کہ “نور سحر” یعنی صبح کی روشنی اور “حسن گل” یعنی پھول کی خوبصورتی جیسے استعارے قدرتی دنیا کی شان و شوکت اور خوبصورتی کو اجاگر کرتے ہیں۔ شیفتہ کا بصری اور سمعی منظر کشی کا استعمال قارئین کو ایک پر سکون لیکن متحرک منظر میں مدعو کرتا ہے اور صبح کی عارضی خوبصورتی کی تعریف کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ شاعر کہتا ہے کہ

دو چار فرشتوں پہ بلا آئے گی نا حق

اے غیرت ناہید نہ ہو نغمہ سرا دیکھ

اس مصرعے میں شاعر ایک مابعد الطبیعیاتی کشمکش کا تعارف کراتے ہوئے دکھائی دیتا ہے۔ “فرشتے” اور “بلا” یعنی آفت کا حوالہ الہٰی مخلوقات کی پاکیزگی کو ان ناگزیر مصائب کے ساتھ جوڑتا ہے جس کا انہیں ناانصافی سے سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ “غیرت ناہید” یعنی ناہید کا فخر، آسمانی یا خالص فخر کا حوالہ، فخر کی ایک اعلیٰ، غیر داغدار شکل کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ گلوکار یعنی نغمہ سرا بننے کے خلاف مشورہ دے کر، شاعر شاید دنیاوی باطل یا عزائم کے خلاف ہوشیار ہو نے کی کوشش کررہا ہے ۔ سماجی اصولوں کے بارے میں شاعر کہتا ہے کہ

منت سے مناتے ہیں مجھے میں نہیں مانتا

اوضاع ملک دیکھ اور اطوار‌ گدا دیکھ

یہ شعر سماجی اصولوں اور ذاتی سالمیت پر شاعر کے موقف کی عکاسی کرتا ہے۔ وہ اپنی آزادی کا دعویٰ کرتے ہوئے چاپلوسی یا قائل کرنے یعنی (”منت سے مناتے ہیں”) سے متاثر ہونے کو مسترد کرتا ہوا نظر آتا ہے۔ “اوضاع ملک” اور “اطوار‌ گدا” یعنی بھکاری کا برتاؤ، کی متضاد تصاویر سماجی ڈھانچے پر پرزور تنقید کا کام کرتی ہیں، جو حکمران اشرافیہ اور عام لوگوں کے درمیان تفاوت پر زور دیتی ہیں۔ شاعر نے فتنہ اور سالمیت کی عکاسی اس انداز سے کی ہے جیسے

گر بو الہوسی یوں تجھے باور نہیں آتی

اک مرتبہ اغیار کے قابو میں تو آ دیکھ

شاعر فتنہ کے مقابلے میں اخلاقی سالمیت کے موضوع پر بات کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ لفظ “بو الہوسی” استعاراتی طور پر بدعنوانی یا اخلاقی زوال کی رغبت کی نمائندگی کرتا ہے۔ شاعر قارئین کو محکومیت کا تجربہ کرنے کے لیے چیلنج کرتے ہوئے کہتا ہے کہ ” اک مرتبہ اغیار کے قابو میں تو آ دیکھ”۔ شاعر اخلاقی چیلنجوں کا سامنا کرتے ہوئے ثابت قدمی کی اہمیت کو اجاگر کرتا ہے۔ شاعر کہتا ہے کہ

اتنی نہ بڑھا پاکیٔ داماں کی حکایت

دامن کو ذرا دیکھ ذرا بند قبا دیکھ

یہاں، شاعر خود کو راستبازی کے خطرات سے خبردار کرتا ہوا نظر آتا ہے۔ “پاکیٔ داماں” یعنی لباس کی پاکیزگی، ذاتی خوبی یا سالمیت کی علامت ہے۔ اپنے لباس یعنی “دامن کو ذرا دیکھ”، کے قریب سے معائنہ کرنے پر زور دیتا ہوا دکھائی دیتا ہے، شاعر عاجزی اور خود آگاہی کی وکالت کرتا ہے اور کسی کی اخلاقی برتری کے بارے میں احتیاط کرنے پر زور دیتا ہے۔ شاعرانسانی تجربے میں مایوسی اور امید کا زکر یوں کرتا ہے کہ

اک دم کے نہ ملنے پہ نہیں ملتے ہیں مجھ سے

اے شیفتہ مایوسیٔ امید فضا دیکھ

آخری شعر میں، شاعر امید اور مایوسی کے دوہرے پن کو تلاش کرتا ہوا نظر آتا ہے۔ لوگوں کا ایک لمحے کی غیر موجودگی کے لیے خود سے دوری اختیار کرنے کا تصور انسانی رشتوں کی فطرت کی عکاسی کرتا ہے۔ شاعر اپنے آپ کو “شیفتہ” سے مخاطب کرتے ہوئے کہتا ہے کہ ” اے شیفتہ مایوسیٔ امید فضا دیکھ”۔ شاعر مایوسی اور ناامیدی کے وسیع ماحول کے ساتھ ذاتی جدوجہد کی تصویر کشی کرنے کی کوشش کرتا ہے۔

خلاصہ کلا یہ ہے کہ مصطفیٰ خان شیفتہ کی غزل انسانی جذبات اور سماجی تنقیدوں کی گہرائی سے تحقیق پر مبنی بہترین شاعری ہے، جسے شاعر نے بھرپور منظر کشی اور بہترین اسلوب کے ذریعے پیش کیا ہے۔ ہر مصرعہ غزل کے اسلوب پر اس کی مہارت کے ثبوت کے طور پر ہمارے سامنے ہے، شاعر ذاتی عکاسی کو آفاقی موضوعات کے ساتھ جوڑتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ شیفتہ کی شاعری کلاسیکی اردو ادب کا ایک اہم حصہ ہے، جو قارئین کو وجود کی پیچیدگیوں، اخلاقیات اور زندگی کی عارضی نوعیت پر غور و فکر کرنے کی دعوت دیتی ہے۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

صریر خامہ

بدھ جون 5 , 2024
وہ جنون کے اولین دن تھے ۔ نیلی روشنائی پپوٹوں سے ہوتی ذہن کو منور کرتی تھی ۔ کتب کے اوراق کی خوشبو نتھنوں میں گھسے جاتی تھی
صریر خامہ

مزید دلچسپ تحریریں