مرا من جو پھولوں کی طرح کھلا ہے

یوم والد پر نئی نظم ( میرا والد )

مرا من جو پھولوں کی طرح کھلا ہے

مرا من جو پھولوں کی طرح کھلا ہے

مجھے یہ مرے باپ سے ہی ملا ہے

لحد میں بھی سنتا ہے میری فغاں کو

مرا باپ اب بھی مری مانتا ہے

مجھے مشکلوں میں یہی لگ رہا ہے

کہ اب بھی وہ میرا ہی مشکل کشا ہے

دلاسہ بھی دیتا ہے جب رو پڑوں تو

مرا باپ اب تک مرا حوصلہ ہے

مجھے ہر براٸی سے بھی روکتا ہے

لحد میں بھی میرا وہ نجم الھدٰی ہے

نبوت، رسالت، امامت ، ولایت

جو توحید پر ہوں یہ اس کی عطا ہے

مرا باپ رکھنا ارم میں! خدایا

یہی میرے دل نے ہمیشہ کہا ہے

سکھایا ہے والد نے ہر لفظ قائم

لبوں پہ جو میرے یہ حرفِ دعا ہے

hubdar qaim

سیّد حبدار قائم

آف غریب وال

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١1989 میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

مصاحبہ

پیر جون 20 , 2022
ان کا تعلق بھکر شہر سے ہے۔بنیادی طور پر موسیقار ہیں ۔ اکثر نامور فوک سنگر ان کے شاگرد ہیں۔
مصاحبہ