کیا ارفع واعلیٰ ہے مقامِ شاہِ والا

صورت بھی حسیں ہے تیری سیرت بھی حسیں ہے
ثانی تیرا آفاق میں واللہ نہیں ہے

گیسو ہیں کہ خوشبوسے معطر ہیں گھٹائیں
چہرہ ہے کہ تابندہ کوئی ماہِ مبیں ہے

کیا ارفع واعلیٰ ہے مقامِ شاہِ والا
جھکتی درِ اقدس پہ فرشتوں کی جبیں ہے

کرتے ہیں ملائک بھی شب وروز سلامی
کہتے ہیں کہ یہ بارگہِ خسروِ دیں ہے

سایہ تیری رحمت کا ہر اک عاصی کے سر پہ
ہوگا سرِ محشر تیری امت کو یقیں ہے

اس پر بھی ہو اک نظرِ کرم اے میرے آقا!
بسملؔ تیرے دروازے کا ادنیٰ سا مکیں ہے

کیا ارفع واعلیٰ ہے مقامِ شاہِ والا

sultan mehmood bismil

سردار سلطان محمود بسملؔ

آغا جہانگیر بخاری

بانی مدیر و چیف ایگزیکیٹو

Next Post

سئیں زوار حسین گوہرؔ

پیر اکتوبر 10 , 2022
سرائیکی کربلائی اَدب دے ہر حُسینی شاعر نے اپݨے اپݨے دورِ حیات وچ حُسینت دی شاعری کوں لاذوال فنِ بلاغت دے علیٰ نمونے عطا فرمین
سئیں زوار حسین گوہرؔ

مزید دلچسپ تحریریں