عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل

جشنِ طاہرہ رباب: عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل

عزیز بلگامی ہندوستان کے ممتاز شاعر، صحافی،کالم نگاراور ادیب ہیں۔ ٧ کتابوں کے مصنف ہیں ۔آپ کی کتابوں میں حرف و صوت، سکون کے لمحوں کی تازگی، دل کے دامن پر، نقد و انتقاد، زنجیرِ دست و پا، بحر کوثر کی ایک آبجو اور ذکر میرے حبیب ﷺ کا شامل ہیں۔آپ اسٹیٹ بنک آف انڈیا کے سابق افسر رہ چکے ہیں۔ کرناٹک میں کالج برائے خواتین کے پرنسپل بھی رہ چکے ہیں۔ اس وقت اردو ادبی چینل “فکروفن شعر سخن” کے مدیر ہیں۔جولائی ٢٠٢٣ میں آپ کی شخصیت اور خدمات پر کرناٹک یونیورسٹی سے ایک طالبہ نے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ہے۔ محترمہ طاہرہ رباب کا پورا نام طاہرہ رباب الیاس/ جعفری ہے۔ آپ کا آبائی وطن پاکستان ہے۔ جرمنی میں مقیم ہیں۔تعلیم بی اے، اعزازی سند ڈاکٹریٹ تک حاصل کی ہے۔پیشہ جرمن گورنمنٹ کی کریمنل پولیس اور انٹرپول میں 5 زبانوں کی سرکاری اٹیسٹڈ ترجمانی ان کا پیشہ ہے۔۔تصنیفات:کل 6 ہیں۔ہندوستان، پاکستان، کینیڈا،امریکہ، بلجیئم، اٹلی، ہالینڈ میں پذیرائی ہو چکی ہے۔

جشنِ طاہرہ رباب کے پر مسرت موقع پر ہندوستانی شاعر عزیز بلگامی اور پاکستانی شاعرہ طاہرہ رباب اپنی شاعرانہ صلاحیتوں کو ایک دوسرے سے جوڑتے ہوئے ایک مشترکہ غزل تخلیق کی ہے جس کا پہلا مصرع عزیز بلگامی کا ہے اور دوسرا مصرع طاہرہ رباب کا ہے اس طرح کی یہ پہلی مشترکہ غزل ہے جس سے ایک ہم آہنگ امتزاج پیدا ہوتا ہے جو محبت، روحانیت اور انسانی حالت کی پیچیدگیوں کو تلاش کرتا ہے۔ یہ شاعرانہ شاہکار دونوں نامور شاعروں کی شاعری سے مزین، جذبات اور فلسفیانہ عکاسیوں کی داستان کی طرح کھل کر سامنے آتی ہے۔

دونوں شاعروں کی شاعری کا مرکزی موضوع دماغ اور دل کی پاکیزگی کے گرد گھومتا ہوا نظر آتا ہے، جو محبت کے جنون کی عدم موجودگی کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔ محبت کا یہ جشن ایک انوکھا موڑ لیتا ہے جب اشعار سمندر کی گہرائیوں میں ڈوب جاتی ہیں اور استعاراتی طور پر خشک ہو کر واپس آتی ہیں، جو محبت کے چیلنجوں کے سامنے ایک گہری تبدیلی کی علامت ہیں۔ شاعری کا تھیم مزید روحانی دائرے کی کھوج کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے اور دعاؤں کے اثرات اور الہی قدرت سے تعلق کی ارتقا پذیر نوعیت کا جائزہ لیتا ہے۔

عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل کی ساخت اور تھیم کا فنی و فکری جائزہ لینے سے پتہ چلتا ہے کہ اس غزل میں شاعرانہ ڈھانچہ ایک خوشگوار تعاون کا آئینہ دار نظر آتا ہے، اس مشترکہ غزل کے لیے عزیز بلگامی نے ابتدائی شعر تیار کیا اور طاہرہ رباب بغیر کسی رکاوٹ کے شاعری کی مشعل کو آگے بڑھا رہی ہیں۔ یہ باہمی تعاون نہ صرف تال کے بہاؤ کو بڑھاتا ہے بلکہ موضوعات کے تسلسل کے لیے ایک استعارہ کا کام بھی کرتا ہے۔ دونوں نامور شاعروں کے ان اشعار میں سمندروں کی وسعتوں کو استعاراتی کینوس کے طور پر استعمال کیا گیا ہے، اشعار میں ذہن کی پاکیزگی سے محبت کی پیچیدگیوں تک کے سفر کو خوبصورتی سے دکھایا گیا ہے۔

جشن طاہرہ رباب کے اس شاعرانہ جشن کے موقع پر اس مشترکہ غزل کو ادبی آلات سے بھی مزین کیا گیا ہے جو شاعری کی گہرائی اور گونج میں اضافہ کرتے ہیں۔ سمندروں میں اترنے اور خشک ہو کر واپس آنے کی منظر کشی ایک واضح تضاد پیدا کرتی ہے، جب کہ دعا، محبت اور قضا (ادھوری دعاؤں) کا ذکر روحانی تجربات کی ایک پُر اثر تفسیر کا کام کرتا ہے۔ الیگزینڈر کے گانے گانے کا حوالہ ایک تاریخی جہت کا اضافہ کرتا ہے، جو یہ تجویز کرتا ہے کہ فاتح بھی موسیقی اور شاعری کے دائرے میں سکون پاتے ہیں۔

عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل کا تفصیلی تجزیے کرنے کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ دعا اور محبت کا اپنے جوہر کو کھو دینا روحانی منظر نامے میں ایک گہری تبدیلی کی نشاندہی کرتا ہے۔ یہ دعویٰ کہ گانے سکندر جیسی مشہور شخصیت نے گائے ہیں، لیکن اس کے باوجود حقیقی راگ کی کمی ہے، اس خالی پن کی طرف اشارہ کرتا ہے جو مادی فتوحات لا سکتی ہے۔ اختتامی اشعار محبت کرنے والوں کی جائیداد اور حکمت کے شہر میں دیوانگی کی عدم موجودگی پر زور دیتے ہوئے، حقیقی محبت کی منفرد اور اکثر غیر روایتی نوعیت کی ایک پُرجوش یاد دہانی کے طور پر کام کرتی ہیں۔

خلاصہ کلام یہ کہ جشنِ طاہرہ رباب کے موقع پر عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل شاعرانہ تاثرات کے ایک شاندار امتزاج کے طور پر ابھر کر سامنے آئی ہے، جو جذبات، فلسفیانہ عکاسی، اور انسانی تجربے میں موجود پیچیدگیوں کا جشن پیش کرتی ہے۔ اس اردو شاعری میں اشتراکی جذبہ، موضوعاتی گہرائی اور ادبی خوبی اسے شاعرانہ اظہار کےمنظر نامے میں ایک قابل ذکر حصہ بناتی ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے عزیز بلگامی اور طاہرہ رباب کی مشترکہ غزل پیش خدمت ہے۔

٭٭٭

مشترکہ غزل

مصرعِ اولیٰ: عزیز بلگامی

مصرعِ ثانی: طاہرہ رباب

٭٭٭

دماغ و دل میں اگر بے کلی نہیں ہوتی

“جنون عشق کی وارفتگی نہیں ہوتی”

سمندروں میں اُتر کر میں خشک لوٹا ہوں

“سمندروں میں بھی اب تو نمی نہیں ہوتی”

نماز کوئی بھی ہو، وقت پر ادا کی ہے

“نماز عشق قضا اب مری نہیں ہوتی”

جو نغمہ سنج سروں کے یہاں سکندر ہیں

“انہی کے راگ میں کچھ نغمگی نہیں ہوتی”

عزیز صرف یہ عشاق کا اثاثہ ہے

“خرد کے شہر میں دیوانگی نہیں ہوتی”

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

رحمت عزیز خان چترالی

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

Next Post

روح کیا چیز ہے، سائنس اور اسلام کی روشنی میں؟

جمعہ جنوری 26 , 2024
روح ایک مکمل وجود رکھتی ہے، سوچتی بھی ہے، جسم سے نکلنے کے بعد کلام بھی کرتی ہے اور اس کی یادداشت یعنی میموری بھی قائم رہتی ہے
روح کیا چیز ہے، سائنس اور اسلام کی روشنی میں؟

مزید دلچسپ تحریریں