غلام حسن بٹ کی کشمیری نعت رسولؐ کے تراجم

غلام حسن بٹ کی کشمیری نعت رسولؐ کے کھوار اور اردو تراجم کا تجزیاتی مطالعہ

کشمیری زبان کے شاعر غلام حسن بٹ کی کشمیری زبان میں نعت رسولؐ میں عقیدت اور احترام کا اظہار کیا گیا ہے، آپ کی کشمیری زبان میں شاعری لسانی اور ثقافتی حدود سے ماورا ہو کر کشمیری، کھوار اور اردو زبان کے قارئین کے دلوں کو چھو لینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے۔ کشمیری زبان کے اس شاعرانہ شاہکار میں غلام حسن بٹ نے ایمان، توبہ، اور روحانی روشن خیالی کے موضوعات کو بہترین طریقے سے پیش کیا ہے۔

نعت رسولؐ کا آغاز ایک گہرے التجا کے ساتھ ہوتا ہے، “آپ کا دل اور روح اس نازنین کے لیے وقف ہو جائے،” جو روحانیت کے دائرے میں ایک گہرے خود شناسی سفر کے لیے لہجے کو ترتیب دیتا ہے۔ “نازنین” کی اصطلاح کا استعمال ایک خوبصورت فارسی اصطلاح جس کا مطلب محبوب یا پیارا ہے، فوری طور پر دعا کرنے والے اور الٰہی قدرت کے درمیان قربت کا احساس قائم کرتا ہے۔ لفظ نازنین فارسی سے کھوار میں داخل ہوکر نغزینین بن گیا ہے۔ غلام حسن بٹ کہتے ہیں

زُو جان وند ہاو تس نازنینس

نور خدا یس تابان جبینس

ترجمہ: دل و جان فدا ہو اس نازنیں پہ، نور خدا تاباں جن کی جبیں پہ

غلام حسن بٹ کی نعت کے سب سے نمایاں عناصر میں سے ایک عنصر ان کی بہترین منظر کشی اور استعاراتی زبان کا استعمال ہے۔ وہ شاعرانہ طور پر “خدا کا نور اس کے پیشانی پر چمکتا ہے” کی مثال دے کر الٰہی تعلق کو بیان کرتا ہے، جو تمام تخلیق کے ماخذ سے نکلنے والی روحانی روشنی کی ایک طاقتور تصویر کو ابھارتا ہے۔ یہ منظر کشی شخصیت کو بلند کرنے کا کام کرتی ہے، انہیں رہنمائی اور روشن خیالی کی روشنی کے طور پر پیش کرتی ہے۔ بٹ کہتے ہیں

قوربان لگہ ہاس نند بانی پادن

شہلتھ میہ پی ہے ددمتی سینس

ترجمہ: قرباں جاوں خوبصور ت قدموں پہ، سوختہ جگر کو ٹھنڈک پڑے گی میرے

نعت قربانی اور عاجزی کے تصور کو مزید بیان کرتی ہے، جیسا کہ شاعر اپنا سب کچھ خدا کے قدموں میں رکھ دینے پر آمادگی کا اظہار کرتا ہے۔ یہ سطر”خوبصورت قدموں پر قربان، میرا جلا ہوا جگر ٹھنڈا ہو جائے گا ” نفس کے گہرے ہتھیار ڈالنے اور روحانی تزکیہ کی خواہش کی علامت ہے۔ یہ الٰہی رحم و کرم اور بخشش کی آرزو کی عکاسی کرتا ہے، جیسا کہ شاعر انسانی کمی کو تسلیم کرتا ہے اور چھٹکارے کی تلاش میں سرگردان رہتا ہے۔ غلام حسن بٹ کہتے ہیں

پارِ زان خلقن دژ یِم خداے سنز

اعزاز بخشُن مکعس مدینس

ترجمہ: خلقت کو جس نے اللہ کی پہچان کرائی،اعزاز مکہ اور مدینہ کو بخشا

مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ جیسے اسلامی مقدس مقامات کے حوالہ جات کے ذریعے غلام حسن بٹ اپنے روحانی سفر میں اسلامی تعلیمات اور روایات کی مرکزیت پر زور دیتے ہیں۔ ان معزز مقامات کی تعظیم کرتے ہوئے، وہ مومن کی زندگی میں تقویٰ اور عقیدت کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔ غلام حسن بٹ کا یہ شعر دیکھئیے

گناہو چھِ کرمتی دِل سانی داغی

عرضاہ کر ہاو شفیع مذنبینس

ترجمہ: خطاوں نے ہمارے دل داغی کیے ہیں، شفیع مذنبین سے عرض کریں گے

نعت رسولؐ احتساب اور توبہ کے تصور سے بھی جڑی ہوئی ہے، جیسا کہ شاعر انسانی دل پر گناہ کے داغ کو تسلیم کرتا ہے۔ جیسا کہ یہ سطر، “غلطیوں نے ہمارے دلوں کو داغدار بنا دیا ہے، شفیع مذنبین گناھگاروں سے پوچھیں گے،” قیامت کے دن اور اپنے اعمال کے حتمی حساب کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ یہاں شاعر نے الٰہی ثالث کے سامنے معافی اور معافی مانگنے کی عجلت پر زور دیا ہے۔

نعت رسولؐ کا اختتام انسانی کمزوری اور الٰہی ہمدردی کے جوہر کو سمیٹتے ہوئے معافی اور رحم کی ایک پُرجوش التجا کے ساتھ ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر اس لائن کے ذریعے، “مجھے امید ہے کہ آپ میرے جیسے گنہگار کو معاف کر دیں گے،” شاعر چھٹکارے اور الٰہی فضل کی تلاش کے عالمگیر انسانی تجربے کو مجسم کرتا ہے۔ غلام حسن بٹ کہتے ہیں

چُھم آش بخشے اسہ ہی عاصی

تاریِلہ دِی سُہ اُمتک سفینس

ترجمہ: امید ہے مجھ جیسے عاصی کی بخشش فرمائیں گے،جس روز امت کے سفینے کو پار لگائیں گے

خلاصہ کلام یہ ہے کہ غلام حسن بٹ کی کشمیری زبان میں نعت عقیدت، توبہ اور روحانی خواہش کے لازوال موضوعات کو بیان کرنے کے لیے لسانی رکاوٹوں کو عبور کرتی ہے۔ اپنی فکر انگیز تصویر کشی اور گہری عکاسی کے ذریعے، نعت قارئین کو خود کی دریافت اور روحانی بیداری کے تبدیلی کے سفر پر مدعو کرتی ہے۔ غلام حسن بٹ کی شاعرانہ مہارت اور دلی اظہار ایمان کی پائیدار طاقت اور الٰہی کی بے پایاں رحمت کا ثبوت ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے غلام حسن بٹ کی کشمیری نعت کے کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔

*

کھوار تراجم

*

ہردی اوچے ژن قربان ہتے نغزینیو سورا

نور خدا ڑپ ڑپھو کورویان کوسکی جبینو سورا

تان سورو قربان کوروم ہتو شیلی قدمان سورا

پولیرو جگروت مه کیہ اوشاکی تاریرا

خلقتوت کا کی اللهو پہچانو کوریتاۓ

اعزاز مکہ اوچے مدینوتے پرائے

گناہ اسپہ ہردیان داغدار کوری شینی

شفیع مذنبینوتے عرضی کوروسی

امید شیر کی مه غون گنھگاروتے معاف کوروئے

کیہ آنوسو کی تان امیتو کھشٹیو پھار نیساوا

Title Image by aditya wicaksono from Pixabay

[email protected] | تحریریں

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

سرفراز بزمی کی "حمدیہ شاعری" کا تجزیاتی مطالعہ

پیر مارچ 18 , 2024
سرفراز بزمی کا تعلق بھارت کی ریاست راجستھان کے سوائی مادھوپور ضلع سے ہے علوم دینیہ میں فارغ التحصیل اور عصری علوم میں
سرفراز بزمی کی “حمدیہ شاعری” کا تجزیاتی مطالعہ

مزید دلچسپ تحریریں