ٹھنڈا پانی

کاتب : شاندار بخاری

مقیم مسقط

میری آج کی یہ مختصر سی تحریر ایک اہم اور سنجیدہ مسلئے کے بارے میں ہے جو کہ عام طور پر مسئلہ لگتا نہیں مگر ہوتا ہے صرف ہماری جانب سے غفلت اور عدم توجہی کا شکار ہے۔

یہ بات آپ کے مشاہدے میں بھی آئی ہوگی کہ اکثر لوگ ایک دوسرے کا نام بگاڑ کر انہیں مخاطب کرتے ہیں جو کہ اکثر اوقات تو بڑے عجیب و غریب و معیوب ہوتے ہیں اور اکثر نہایت ہی منفرد ، بعض اوقات کچھ نام ہمیں تو عجیب لگتے ہیں مگر پکارنے والے اور پکارے جانے والے شخص کو بوجوہ پسند اور قبول ہوتے ہیں۔ مثال کے طور پر سن اسی کی دہائی میں جو عزت ماب سفیر صاحب یہاں تعینات تھے ان کا پورا اور اصل نام تو مجھے اس وقت یاد نہیں آرہا لیکن ان کو لوندخوڑ صاحب کہ کر پکارا جاتا تھا یہ نام جو کہ ان کی علاقائی نسبت کی وجہ سے تھا  لیکن جو لوگ مردان کے اس گاوں سے واقف نہیں تھے انہیں بڑا دلچسپ لگتا تھا۔ اسی طرح ہمارے معاشرے میں عموما عبدللہ کو دولا ، سلیم / سلمان کو سلو اسی طرح یاد آیا مشہور گلوکار نصرت فتح علی کا پیدایش کے بعد نام پرویز تھا جو کہ بعد میں بدل کر نصرت رکھا گیا اور ان کے پرانے دوست احباب آج بھی انہیں پرویز کا مختصر پیجی ( پے جی ) ہی کہ کر یاد کرتے ہیں۔

نام خواہ وہ کسی شخص کا ہو یہ پھر جگہ کا ہو اس سے اس کی پہچان ہوتی ہے ہمارے شہر اٹک کا نام جوکہ تاریخی اہمیت کا حامل ہے لیکن برٹش دور میں اس وقت کےفوجی افسر کیمپبل کے نام پر کیمپبل پور رکھ دیا گیا تھا اور سن ستر کی دہائی میں پھر سے بدل کر پرانا نام اٹک رکھ دیا گیا تو جیسے لوگوں کے نام اکثر بوجوہ بدل دیے جاتے ہیں اسی طرح کئی ملکوں اور شہروں کے نام بھی اب بدل چکے ہیں سبیل مثال ساہیوال کا پرانا نام منٹگومری تھا ، فیصل آباد کا پرانا نام لائل پور تھا اسی طرح دنیا کے بیشتر ممالک کے نام مختلف زبانوں میں مختلف ہیں یہاں عرب ممالک میں جرمنی کو المانیا کہتے ہیں ، اٹلی کو ایطالیا ، فرانس کو فرنسا اور آسٹریا کو نمسا کہتے ہیں ، سعودیہ عرب کا نام 1932 سے پہلے مملکہ حجاز و نجد تھا ، مدینہ منورہ کا پرانا نام یثرب تھا جوکہ رسول ﷺنے بدل کر مدینہ رکھ دیا یثرب میں بخار کی وباء عام تھی بڑی شدت کا بخار ہوتا تھا اکثر آنے والے اس میں مبتلا ہو جاتے تھے رسول ﷺنے یثرب کی مشقتیں جھیلنے پر جنت کی بشارت سنائی اور اس کا نام طیبہ رکھ دیا تو نام بدلنے کی برکت سے مدینہ منورہ کی فضاء اللہ کے فضل و کرم سے خوشگوار ہو گئی۔ رسول ﷺنے خواب میں دیکھا کہ کالی کلوٹی عورت مدینہ منورہ سے نکل کر حجفہ جہاں یہودیوں کی آبادی تھی کی طرف چلی گئی آپ ﷺنے فرمایا کہ وہ وباء جو ہوا کے خراب ہونے سے پھیلتی تھی یہاں سے منتقل ہو گئی ہے اس سے یہ بات واضح ہوتی ہے کے ناموں کا منفی ور مثبت اثر ہوتا ہے۔ اسی طرح آپ نے کئی صحابہ کرام کے نام بھی بدلے اور کئی صحابہ کرام اور اہل بیت کو پیار سے مختلف ناموں سے پکارا، بات نکلی ہے تو میں آپ کو چند ایک چیدہ چیدہ برگزیدہ ہستیوں کے اصل نام اور القاب بتاتا چلوں کیونکہ عربوں میں القاب یا کنیت کا بڑا روج رہا جو کہ آج بھی ہے ، سب سے پہلے شہید ہونےوالی صحابیہ ام عمار ( عمار کی والدہ ) کا اصل نام سیدتنا سمیہ ر۔ض تھا ، ابو ھریرہ ر۔ض  کا اصل نام عبدالحمن تھا ، حضور ﷺکے چچا اور حضرت علی کرم اللہ وجہہ کے والد حضرت ابی طالب کا اصل نام عمران تھا۔

شیکسپیئر نے کہا تھا ” نام میں کیا رکھا ہے ” لیکن ہم اس بات سے اتفاق نہیں کرتے کیونکہ نام سے ہی تو پہچان ہوتی ہے اور اسلام کے اصولوں کے مطابق کسی کا نام بگاڑنا ایک بڑا گناہ ہے۔   بحث کو سمیٹتے ہوئے حاصل یہی ہے کہ کسی شخص کو پکارتے ہوئے یا کسی جگہ کی نشاندھی یا حوالہ دیتے ہوئے اچھے اور مہذب الفاظ کا چناو کریں یہاں یاد آیا ایک مرتبہ ایک قانونی معاملہ کیلئیے جمع کروائے گئے فارم میں گواہ کا نام لکھنا تھا تو گواہ صاحب نے مجھ سے قلم مانگا اور اپنے نام سے پہلے حضرت مولانا فلاں بن فلاں لکھ دیا جو کہ بہت ہی تعجب کی بات تھی اور کسی شخص میں اتنی خود پسندی میں نے پہلے نہیں دیکھی تھی ، ایک اور واقع یاد آ گیا ہوا یوں کہ مجھے دفتر کے کام کے سلسے میں ایک جگہ جانے کا اتفاق ہوا اور وہاں کہ متعلقہ افسر نے میرے آتے ہی باآواز بلند کہا ٹھنڈا پانی ! میں نے ان کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ مجھے طلب نہیں ہے جس پر وہ صاحب مسکرائے اور کہا کہ مین تو اپنے دفتر کے ملازم کو بلا رہا ہوں جس کا اصل نام تو ڈنڈا پنی ہے لیکن اب بگڑ کر ٹھنڈا پانی ہوگیا ہے۔

شاندار بخاری

Next Post

ضلع اٹک کے اہم مقامات کی سیر کیلئے ٹورسٹ سفاری ٹرین کا افتتاح

پیر مارچ 1 , 2021
ضلع اٹک کے اہم مقامات کی سیر کیلئے ٹورسٹ سفاری ٹرین کا افتتاح
ضلع اٹک کے اہم مقامات کی سیر کیلئے ٹورسٹ سفاری ٹرین کا افتتاح