سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” کے تراجم

سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” کے تراجم

عطا محمد عطا کی سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” کے کھوار اور اردو تراجم

عطا محمد عطا کی سرائیکی نظم ” اساں کٹھے ہیں” اپنی بہترین اشعار کی بھرپور سیریز میں اتحاد، امید، لچک اور معاشرتی تبصرے کے موضوعات کو پیچیدہ طریقے سے بیان کرتی ہے۔ پنجاب کے لیہ ضلع کے کوٹ سلطان سے تعلق رکھنے والے نوجوان سرائیکی شاعری عطا محمد عطا اپنی شاعری میں ایک الگ ثقافتی نقطہ پیش کرتے ہیں، جو اپنے اردگرد کے اخلاقیات اور باریکیوں کی تفصیل سے عکاسی کرتے ہیں۔

یہ نظم انفرادی اختلافات کے باوجود مشترکہ انسانی تجربے پر زور دیتے ہوئے اتحاد کی ایک پُرجوش دعوت کے ساتھ شروع ہوتی ہے۔ بہترین استعاروں اور خوبصورت تصویروں کے ذریعے، عطا محمد عطا انسانی حالت کی ایک واضح تصویر پیش کرتا ہوا نظر آتا ہے، مشکلات اور لچک کے ان لمحات کو تلاش کرتا ہے جو قاری کے دل کی گہرائیوں سے چھو لیتے ہیں۔

سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” کے  تراجم

نظم کی تکنیکی اور فکری گہرائی پیچیدہ جذبات اور معاشرتی حقائق کو بیان کرنے کے لیے علامت اور تمثیل کے شاندار استعمال میں مضمر ہے۔ “دائیں بازو کے تناؤ کو دور کیا جانا چاہئے” اور “جھوٹے دلوں سے اپنے دل کو روئیں” جیسی لکیریں خود شناسی اور خود شناسی کا احساس پیدا کرتی ہیں اور قارئین کو اپنے تجربات اور تاثرات پر غور کرنے کی ترغیب دیتی ہیں۔

مزید برآں، عطا محمد عطا قدرتی منظر کشی کو مہارت سے استعمال کرتا ہے، جیسے کہ کووں کا چکر لگانا اور جنگلی کبوتر چہچہاتے ہیں، تاکہ قدرتی دنیا کے ساتھ انسانیت کے باہمی ربط کو اجاگر کیا جا سکے۔ ہمدردی اور ہمدردی کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے یہ علامتی رشتہ معاشرے کے اندر افراد کے باہمی انحصار کے استعارے کے طور پر کام کرتا ہے۔

نظم کے مرکزی موضوعات میں سے ایک اجتماعی عمل کی طاقت اور مصیبت کے وقت یکجہتی کے گرد گھومتا ہے۔ عطا محمد کی فکر انگیز زبان قارئین کو نسل، مذہب اور نظریے کی رکاوٹوں سے بالاتر ہوکر مقصد اور روح میں متحد ہونے کی ترغیب دیتی ہے۔ “جاتے وقت اپنے ہاتھ سے کچھ گرنے دو” اور “دروازے پر آنے والے بھکاری کو خالی ہاتھ لوٹنے نہ دو” جیسی لکیریں اجتماعی ذمہ داری اور مشترکہ تقدیر کے احساس کو اجاگر کرتی ہیں۔

مزید برآں سرائیکی نظم ” اساں کٹھے ہیں” میں شاعر سماجی اصولوں اور توقعات پر باریک بینی سے تنقید کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے اور قارئین کو چیلنج کرتا ہے کہ وہ جمود پر سوال کریں اور انفرادی غلطیوں کو قبول کریں۔ روشنی اور سائے، خوشی اور غم کے امتزاج کے ذریعے، عطا محمد انسانی وجود کی پیچیدگیوں کو نیویگیٹ کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے، اور انسانی حالت پر ایک باریک نقطہ نظر پیش کرتا ہے۔

اختتامی سطروں میں، عطا محمد عطا اتحاد اور یکجہتی کا ایک طاقتور پیغام دیتے ہوئے قارئین کو یاد دلاتے ہیں کہ ہمارے اختلافات کے باوجود ہم سب ایک ہی درخت کے بکھرے ہوئے پھولوں کی طرح ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں۔ یہ پرہیز موروثی انسانیت کی ایک پُرجوش یاد دہانی کے طور پر کام کرتا ہے جو زبان، ثقافت اور جغرافیہ کی سرحدوں کو عبور کرتے ہوئے ہمیں ایک دوسرے کے ساتھ باندھتا ہے۔

خلاصہ کلام یہ ہے کہ سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” عطا محمد عطا کی شاعرانہ ذہانت کا منہ بولتا ثبوت ہے، جو قارئین کو انسانی تجربے اور اتحاد اور لچک کی پائیدار طاقت پر گہرا مطالعہ پیش کرتا ہے۔ اپنی تکنیکی نفاست اور فکری گہرائی کے ذریعےنظم قارئین کو خود کی دریافت اور اجتماعی روشن خیالی کے ایک تبدیلی کے سفر پر مدعو کرتی ہے، جو سرائیکی شاعری کے ادبی منظر نامے پر انمٹ نقوش چھوڑتی ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے عطا محمد عطا کی سرائیکی نظم “اساں کٹھے ہیں” اور راقم الحروف (رحمت عزیز چترالی) کے سرائیکی سے کیے گئے کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔

٭٭٭

اساں کٹھے ہیں (سرائیکی نظم)

٭٭٭

جتھ ڈیکھیں دھونڑیں دکھ پوسی

یا تلیاں تے سرکار مچے

اکھ الٹی کہیں جا پھرک پووے

جے سیپ ادھڑے سجی بانہہ والا

کاں کرکے بھرکے ویڑھے وچ

جتھ سانجھ سہاگ دی ونگ کرکے

سنویں سترو کوئی پچھو سڈ مارے

تیڈے ہتھوں کوئی شے جھنڑ پووے

ڈیکھیں گثکدا راہ تے لٹھیں کوں

منہ بارشاں دا تھیوے بئے پاسے

ونجے پنڑیں در توں خالی ہتھ

ناں رل وسدا گھنے خیر خبر

دل من تھپڑیں اتے رو ڈیوی

جتھ ڈیکیں چھاں ہے سانولی جھئیں

دھپ نال وی سانگا نس چھٹڑاں

ہنجھ نال کہیڑاں گھر پاون

ناں ہتھ ڈکھلانویں جوگیاں کوں

توں سوچ کوں میں تئیں گھن آویں

جوں تار اندھاری گھلدی ہئی

تیکوں یاد ڈویساں آکھیا ہم

ہک ونڑ دے پھل ہیں ادھڑیے ہوئے

ول کٹھے تھیوں, اساں کٹھے ہیں

ساڈے باجھ عطا ساڈا کوئی کائے نی

٭٭٭

کھوار تراجم

٭٭٭

اسپہ ای اسوسی

کیاوت کہ چریخان انگار بیکو امید باقی اوشوئے

یا پھانین دروخیک شروع بوئے

کھوڑی غیچھ اچانک پھلکئیکا دیار

فروسکی بازوو سورو زروٹھیکا دیانی

قاغ قاغ کوراو کاغ موخینو شانین پھار ئیی بیکا دیانی

شابوکو اولانو چھویو ہوستو دریرو ویزگوڑو کہ چھیکا پرانی

کیہ مشنو وولٹی کامیابیو یقینو سوم جستہ اولانو قدم اوسنیکو سوم تان کی اچھاوار ہواز کی ہائے

بے خیالیا تہ ہوستاری کیہ اشناری کی آف پرائے

تہ پونہ جنگلی کوور کی مستی کوریکا پرانی

بوشیک کی ناراض ہونی

دروازا گیرو تھیش مشکاک کیمری کی خالی ہوستی اچی بغائے

گرمبیشو کی تہ خیر خبارو گانیکو کی پیچھیتاتی

چنگی دلاسہ کی تہ ہردیو کیڑئیتانی

کورا کی چھاغ کی اوشوئے دی ، لیکن یورو سوم رشتہ کی ملاو بیتی اوشوئے

اشرووان گرمبیشیا کی سموگ یا مرکھانان کی ٹھکانہ اوشوئے

ٹوکسی جوگیو تو تان ہوستان لکیران مو پشاوے

تو تان سوچو مہ نسہ انگئیے

کیاوت کی شا کھوٹو طوفان کی گیاوتائے

تتے اوا ہتے لوان تہ یادی انگوم کھیو کی اوا تت لو دیتی اسیتام

اسپہ صرفی ای کانو بچھارائے بیرو گمبوری اسوسی

ای دفعہ خود ای بوسی، اسپہ ای اسوسی

اے عطا اسپہ تان سر غیر اسپہ کا دی خور دوست نیکی


اردو ترجمہ


ہم ایک ہیں

جب چنگاری کے شعلہ بن چانے کی امید باقی ہو

یا ہتھیلیوں میں کھجلی ہونے لگے

پائیں آنکھ اچانک لرز اٹھے

دائیں بازو کی کشیدہ کاری ادھڑنے لگ جائے

کائیں کائیں کرتے ہوئے کوا صحن میں گول چکر کاٹنے لگے

سہاگ رات میں پہنی ہوئی مشترک چوڑی میں شگاف پڑنے لگے

کسی مشن کی طرف کامیابی کے یقین کے ساتھ پہلا قدم اٹھے اور پیچھے سے آواز پڑ جائے

ان جانے میں تیرے ہاتھ سے کوئی چیز گر جائے

تیرے راستے پر جنگلی کبوتر مستیاں کرنے لگیں

بارشیں ناراض ہو جائیں

دروازے پہ آئی ہوئی بھکارن خالی ہاتھ لوٹ جائے

پڑوسی خیر خبر لینا چھوڑ جائیں

جھوٹے دلاسے تیرے دل کو رولا دیں

جہاں سایہ گھنا تو ہو مگر دھوپ سے رشتہ ناطہ جوڑے ہوئے ہو

آنسؤوں کے پڑوس میں سموگ یا دھند کا ٹھکانہ ہو

ٹو کسی جوگی کو ہاتھ کی لکیریں نہ دکھانا

تم اپنی سوچ کو مجھ تک لے آنا

جب کالی آندھی آتی تھی

تچھے وہ کچھ یاد دلاؤں گا جو میں نے کہا تھا

ہم ایک ہی شجر کے بکھرے ہوئے پھول ہیں

دوبارہ اکٹھے ہو چائیں. ہم ایک ہیں

عطا ہمارے اپنے سوا ہمارا کوئی دوسرا نہیں ہے

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

سائنسی صوفیائے کرام!

جمعرات مارچ 7 , 2024
ہر وہ عالم صوفی کہلانے کا مستحق ہے جس کا علم دوسرے عام انسانوں کے لیئے نفع بخش اور باعث برکت ثابت ہو۔ یورپ کی سائنسی لیبارٹریوں
سائنسی صوفیائے کرام!

مزید دلچسپ تحریریں