”شہر خالی، جادّہ خالی، کوچہ خالی، خانہ خالی” کا شاعر امیر جان صبوری

”شہر خالی، جادّہ خالی، کوچہ خالی، خانہ خالی” کا شاعرامیر جان صبوری

رحمت عزیز خان چترالی
(ورلڈ ریکارڈ ہولڈر)

امیر جان صبوری فارسی زبان کے ممتاز شاعر ہیں، آپ نے اپنی شہرہ آفاق شاعری ” شہر خالی، جادّہ خالی، کوچہ خالی، خانہ خالی” سے عالمگیر شہرت حاصل کی ہے۔ آپ کی فارسی شاعری خالی پن، خوف اور تڑپ کے موضوعات پر ایک پُرجوش عکاسی پیش کرتی ہے۔ یہ جذبات ان کی نظموں کے تانے بانے میں پیچیدہ طور پر بنے ہوئے دکھائی دیتے ہیں، جنہیں راقم الحروف (رحمت عزیز خان چترالی) نے امیر جان صبوری کے فارسی کلام کے اصل الفاظ کو محفوظ رکھتے ہوئے کھوار زبان میں تراجم کرکے شمالی پاکستان کے چترال، مٹلتان کالام اور گلگت بلتستان کے وادی غذر کے کھوار بولنے والوں کے آسانی پیدا کی ہے۔
امیر جان صبوری کی شاعری کا مرکزی موضوع خالی پن کا وسیع احساس ہے۔ شاعر ایک ایسی دنیا کی تصویر کشی کے لیے بہترین امیجری استعمال کرتا ہے جو ویران ہو چکی ہے، جس کی علامت خالی گلیوں، مکانات، باغات اور میزیں ہیں۔ یہ خالی پن انسانی رشتوں تک پھیلا ہوا ہے، جیسا کہ دوست، محبت کرنے والے، حتیٰ کہ ڈاکٹر بھی ایک دوسرے سے ڈرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ صبوری کا کام تنہائی اور لاتعلقی کو سمیٹتا ہوا دکھائی دیتا ہے جو اکثر انسانی تجربے کے ساتھ ہوتا ہے۔

امیر جان صبوری
امیر جان صبوری

امیر جان صبوری کی شاعری اس کی جامع اور اثر انگیز ساخت کی حامل بہترین شاعری ہے۔ “شہر خالی ہے،” “میں نے پکارا،” اور “واپس آؤ” جیسے جملے کی تکرار ایک تال میل پیدا کرتی ہے جو اس کی شاعری کی جذباتی گہرائی کو واضح کرتی ہے۔ چھوٹی سطریں اور انجممنٹ کا بار بار استعمال نظم کے بہاؤ کو بڑھاتا ہوا دکھائی دیتا ہے، جس سے قارئین جذبات کا زیادہ شدت سے تجربہ کر سکتے ہیں۔
صبوری اپنی شاعری اور پیغام کو مؤثر طریقے سے لوگوں تک پہنچانے کے لیے مہارت سے کئی ادبی آلات استعمال کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ تکرار، جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے، ایک نمایاں آلہ ہے جو اس کی شاعری میں خالی پن اور آرزو کو تقویت دیتا ہے۔ منظر کشی، جیسا کہ ” آب از آبی نجنبید خفتہ در خوابی نجنبید،”مایوسی کے تصورات کو جنم دیتی ہے۔ استعارے، جیسے “آسمان میرے ہاتھ کا افسانہ ہے”، مایوسی اور نقصان کا احساس پیدا کرتے ہیں۔ صبوری کی تمام نظموں میں ایک متحد عنصر کے طور پر خوف کا استعمال اس کے خالی پن کی کھوج میں گہرائی اور پیچیدگی کا اضافہ کرتا ہے۔
پہلے بند میں، صبوری نے ایک خالی شہر کی ویران تصویر پینٹ کی ہے، جس میں مانوس چہروں اور گرمجوشی کے کھو جانے پر زور دیا گیا ہے۔ یہ پورے مجموعے کے لیے ٹون سیٹ کرتا ہے، جہاں خالی پن ایک بار بار چلنے والی شکل ہے۔
دوسرے بند میں خوف کے موضوع کو متعارف کرایا گیا ہے، جس میں اس موروثی خدشے کو اجاگر کیا گیا ہے جو زندگی کے مختلف پہلوؤں پر محیط ہے۔ صبوری کی شاعری ایک ایسی دنیا کی عکاسی کرتا ہے جس میں اعتماد اور سلامتی ختم ہو گئی ہے۔
تیسرا بند شاعر کی تڑپ اور آرزو کو پیش کرتا ہے۔ ٹوٹی ہوئی تاریں کمیونیکیشن کی خرابی کی علامت ہیں، اور انتظار کے برسوں نے نقصان اور ترک کرنے کے گہرے احساس کو اجاگر کیا ہے۔
چوتھا بند طاقتور جذبات کو ابھارتا ہے جب شاعر روتا ہے اور سکون تلاش کرتا ہے۔ ایک سوئے ہوئے شخص کی گہرائی کا پانی کی گہرائی سے موازنہ خود شناسی کی ایک تہہ کا اضافہ کرتا ہے۔
پانچواں بند خالی پن اور ویرانی کے موضوعات کو مزید تقویت دیتا ہے، سوکھے چشموں اور بجھتی ہوئی محبت سے ناامیدی کا احساس پیدا ہوتا ہے۔

”شہر خالی، جادّہ خالی، کوچہ خالی، خانہ خالی” کا شاعر امیر جان صبوری
Image by mostafa meraji from Pixabay


آخری بند واپسی کی التجا کرتا ہے، جو کھو گیا ہے اسے بحال کرنے اور گزرے ہوئے دور کی خوشی کو بحال کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ فارسی کے معروف شاعر حافظ شیرازی کا حوالہ ثقافتی اور ادبی حوالے سے گہرائی میں اضافہ کرتا ہے۔
امیر جان صبوری کی فارسی شاعری جس کا راقم الحروف (رحمت عزیز خان چترالی) نے کھوار زبان میں ترجمہ کیا ہے، خالی پن، خوف اور تڑپ کی گہرائی سے تحقیق پیش کرتا ہے۔ تکرار، استعاروں اور واضح تصویروں کا استعمال اس کے کام کے جذباتی اثر کو بڑھاتا ہے۔ یہ انسانی حالت کی ایک پُرجوش یاد دہانی کے طور پر ہمارے سامنے ہے، جہاں خالی پن اور آرزو کے لمحات وجود کے تانے بانے میں گہرائی سے سمائے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے امیر جان صبوری کی فارسی نظم اور کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔
شہر خالی، جادّہ خالی، کوچہ خالی، خانہ خالی
جام خالی، سفرہ خالی، ساغر و پیمانہ خالی
کوچ کردہ ، دستہ دستہ ، آشنایان، عندلیبان
باغ خالی، باغچہ خالی، شاخہ خالی، لانہ خالی
کھوار:دنیوتے کیہ علام بیتی شیر کہ شہر خالی، پون راہ خالی، کوچاہ خالی وا دور مور سف خالی خالی غیچھی گونیان، شرابو گیلاس، میز، صراحی و ساغر دی خالی شینی۔ لالش لالش تمامو دوست وا بلبل ہموغاری پیچھی بی اسونی، ہیہ وجہ شیر کی باغیچا شیرو تھاغ وا بوئیکان ماڑ سف خالی شینی۔
وائے از دنیا کہ یار از یار می ترسد
غنچہ ہای تشنہ از گلزار می ترسد
عاشق از آوازہ دیدار می ترسد
پنجہ خنیاگران از تار می ترسد
شہ سوار از جادہ ہموار می ترسد
این طبیب از دیدن بیمار می ترسد
کھوار:اپسوز ہیہ دنیو سورا کہ ہیارا دوست دوستو پوشی بوہرتوئیران، گمبوریان بڑوک بوچھوشیکاری پروشٹی تان گرزینو پوشی بوہرتوئینیان۔ عاشق تان محبوبو ہوازو پوشی بوہرتوئیران، موسیقار سیتارو سیمان سوم ہوست تارئیکاری پروشٹی تان بوہرتوئینیان وا مسافیر اسقان راہین بوغاوا دی بوہرتوئینیان۔ وا طھبیبان لہازان یوران لوڑیکار پروشٹی تان بوہرتوئینیان۔
سازہا بشکست و دردِ شاعران از حد گذشت
سال ہائے انتظاری بر من و تو برگذشت
آشنا ناآشنا شد تا بلی گفتم بلا شد
کھوار:ستارو سما نیکی، تار چھیتی شینی وا شاعران درد حداری زیات بیتی شیر۔ اوا تہ انتظارا ہرونی سالان شاخچئیے اسوم لیکن ستم ظریفیو حد تھے ہیہ شیر کی سف ژانیرو مہ بچے نوژان بیتی اسونی۔
گریہ کردم، نالہ کردم، حلقہ بر ہر در زدم
سنگ سنگِ کلبہ ویرانہ را بر سر زدم
آب از آبی نجنبید خفتہ در خوابی نجنبید
کھوار:اوا بو کیڑیتام، گریہ اوچے فریاد اریتم، ہر ای دروازا ٹاخئیتم۔ ہیہ ویران بیرو ژاغو بوہرتان شوغوران تان کپالہ دریتام لیکن کیہ قسمہ کی اوغوتے (سمنداروتے) ہیہ لو معلوم نو کہ ہیس کندوری کوڑوم رے ہشتانچقہ اورئیرو موشوت کیہ پتہ کی ہیس کندوری ڈنگ اوراری بی اورئیے اسور۔
چشمہ ہا خشکیدہ و دریا خستگی را دم گرفت
آسمان افسانہ ما را بہ دستِ کم گرفت
جام ہا جوشی ندارد، عشق آغوشی ندارد
بر من و بر نالہ ہایم، ہیچ کس گوشی ندارد
کھوار:سف اوچھوغ چھوچھو بیتی شینی، دریاہ سست ہونی، آسمان دی مہ داستانوت کیہ اہمیت نو پرائے، سف نشہ بے اثر بیتی شینی وا عشقو انگار کیاغکہ مہ پزا اوشوئے ہسے دی بوغین بیتی شیر۔
بازآ تا کاروانِ رفتہ باز آید
بازآ تا دلبرانِ ناز ناز آید
بازآ تا مطرب و آہنگ و ساز آید
تا گل افشانم نگارِ دل نواز آید
بازآ تا بر در حافظ اندازیم
گل بیفشانیم و می در ساغر اندازیم
کھوار:تو آچی گیے کوریکو کہ قافلہ وا روانہ بوئے، آچی گیے کی محبوبانن ناز اوچے انداز آچی گونی۔ آچی گیے کی پریشان سازو دنیا آباد بوئےآچی گیے کی تھے حافظ شیرازیو اندازا مہرجانانو استقبالا گمبوریان اولئیسی وا رونقان بیلینجیسی۔
٭رحمت عزیز خان چترالی اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ”کافرستان”، اردو سفرنامہ ”ہندوکش سے ہمالیہ تک”، افسانہ ”تلاش” اور خودنوشت ”چترال کہانی”، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، اس واٹس ایپ نمبر 03365114595 اور [email protected] پر ان سے رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

رحمت عزیز خان چترالی

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

Next Post

کوفیوں کی غداری

اتوار نومبر 5 , 2023
اسرائیل اوسطا ہر 3منٹ بعد غزہ کی رہائشی آبادیوں، ہسپتالوں، ایمبولینسوں اور مسجدوں کو نشانہ بناتا رہا ہے جس میں اب تک 60ہزار عمارتیں کھنڈرات
کوفیوں کی غداری

مزید دلچسپ تحریریں