سید محمود گیلانی کی شاعری میں دعائیہ عناصر اور کھوار تراجم

سید محمود گیلانی کی شاعری میں دعائیہ عناصر اور کھوار تراجم

سید محمود محمود گیلانی کا تعلق دبستان لاہور پاکستان سے ہے، پیشے کے لحاظ سے وکیل ہیں۔ وکالت کے ساتھ ساتھ شاعری بھی کرتے ہیں۔ شاعری میں حمد، نعت، غزل، نظم اور دعائیہ شاعری کے لیے مشہور ہیں۔ سید محمود گیلانی اپنی اردو شاعری میں خوبصورت استعارات و تلمیحات استعمال کرتے ہیں۔ آپ کی اکثر شاعری خود شناسی، شرح اموات اور انسانی حالت کے موضوعات پر روشنی ڈالتی ہیں۔ اس کا پُرجوش اظہار اور بہترین منظر کشی وجود کی پیچیدگیوں کی ایک جھلک پیش کرتی ہے، وجودی غصے سے نمٹتی ہے اور ماورائی ہونے کی آرزو کرتی ہے۔
محمود گیلانی کی شاعری کثیر جہتی موضوعات کے گرد گھومتی ہوئی دکھائی دیتی ہے جیسے زندگی کی عارضی نوعیت، روحانی بیداری، وجودی درد، اور خود کو گہرائی سے سمجھنے کی شدید خواہش پر مبنی اشعار کافی تعداد میں موجود ہیں۔ فکر انگیز خیالات کے ساتھ ساتھ دیگر خوبصورت افکار پر مبنی موضوعات اس کی شاعری میں اکثر دیکھے جاسکتے ہیں جو زندگی کی مشکلات کے درمیان روشن خیالی کی گہری خواہش کو ظاہر کرتے ہیں۔
ساخت اور تھیم کے لحاظ سے تنقیدی جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ سید محمود گیلانی کی شاعری کی ساخت کلاسیکی اردو شاعری کی شکلوں سے ملتی جلتی ہوئی نظر آرہی ہے، جس میں بھرپور استعارے اور علامتی زبان استعمال ہوئی ہے۔ اس کی شاعری اکثر غزل اور نظم کی شکلوں پر قائم رہتی ہیں، جو تال کے نمونوں اور جذباتی گونج کے امتزاج کی اجازت دیتی ہیں۔ ہر بند میں معنی کی کئی پرتیں ہیں جو انسانی تجربے اور ہنگاموں کے درمیان اندرونی امن کی تلاش پر زور دیتے ہیں۔
گیلانی کی شاعری ادبی آلات بھی استعمال کیے گئے ہیں اور آپ کا شاعرانہ اظہار ادبی آلات سے مکمل طور پر مزین دکھائی دیتا ہے جیسے کہ خوبصورت استعارات، بہترین تشبیہات، شخصیت سازی اور امیجری کی مثالیں موجود ہیں۔ “آگ کے صحرا میں موم کی پتلی پرت” یا “تھرتی ہوئی شاخ” جیسے استعاروں کے ذریعے شاعر زندگی کی نازک نوعیت اور روح کے ہنگامہ خیز سفر کو سمیٹتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ اس کا بہترین تصوّرات کا استعمال جذباتی اثر کو تیز کرتا ہے اور قاری کے لیے حسی تجربہ پیدا کرتا ہے۔

سید محمود گیلانی کی شاعری میں دعائیہ عناصر اور کھوار تراجم


آپ کی نظم “دعا” میں شامل اشعار ہمیں کمزوری اور وجودی مایوسی کا احساس دلاتی ہیں۔ آگ کے صحرا میں موم کی ایک نازک تہہ کی منظر کشی زندگی کی تلخ حقیقتوں کے درمیان انسانی وجود کی نزاکت کو ظاہر کرتی ہے۔ مصیبتوں سے بچنے کے لیے خدا سے مدد کی درخواست شاعر کی مشکلات کے ساتھ اندرونی جدوجہد کی عکاسی کرتی ہے۔ پیٹ پر پتھر باندھنے کی تصویر کشی اور رزق کی تڑپ سکون کی جسمانی اور جذباتی بھوک کے متوازی ہے۔
نظم “دعا” مزید طاقت اور کمزوری کے درمیان فرق کو تلاش کرتی ہے، افراتفری کے درمیان روحانی تجدید کی آرزو کرتی ہے۔ موت اور پنر جنم کے حوالہ جات، جیسا کہ “حسن کو کانپتی ہوئی شاخ کو تروتازہ کرنے دو” اور “مردہ خون کی رگوں کو الاؤ سے بھر دیں” میں دیکھا گیا ہے، جو اندرونی تجدید اور ماورائی کی خواہش کی علامت ہے۔
مزید برآں نظم “دعا” معاشرتی مجبوریوں کے خلاف مزاحمت اور بیرونی فیصلے سے خودمختاری کی درخواست کی تڑپ کو سمیٹتی ہے۔ گیلانی کی فکر انگیز زبان اور گہرا تعارف شاعر کے اندرونی انتشار اور ذاتی اور معاشرتی قید سے آزادی کی جستجو کو ظاہر کرتا ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ سید محمود گیلانی ایڈووکیٹ کی اردو شاعری انسانی حالت کی گہرائی سے عکاسی پر مبنی شاعری ہے جو شاعرانہ نفاست کے ساتھ ساتھ وجودی گہرائیوں کو تلاش کرتی ہے۔ اس کی شاعری آفاقی موضوعات میں ڈھلتی ہوئی نظر آتی ہیں جو ہر عمر کے قارئین میں یکسان مقبول ہے۔ سید محمود گیلانی کی شاعری کو چترال، مٹلتان کالام اور گلگت-بلتستان کی وادی غذر میں بولی جانے والی زبان کھوار میں ترجمہ کرنے میں راقم الحروف (رحمت عزیز خان چترالی) کی ادنیٰ سی کوششوں نے شاعر کے پیغام کی آفاقیت اور گہرائی کو مزید وسعت دینے میں اہم کردار ادا کیا ہے، جس سے اسے شمالی پاکستان کے وسیع تر قارئین تک رسائی حاصل ہوگی اور گیلانی کی فصاحت اور جذباتی گہرائی کے جوہر کو مختلف لسانی تناظر میں محفوظ کیا جائے گا۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے سید محمود گیلانی کی شاعری اور کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔
“دعا” (نظم)
دل و نظر کو وہ پہلی سی روشنی دے دے
مرا شعور مجھے میری آگہی دے دے
میں ایک موم کا پتلا ھوں دشتِ آتش میں
مری گرفت میں اب سحرِ سانوری دے دے
کسی کے حق کی طرف آنکھ بھی اّٹھا نہ سکوں
مرے خدا تو مجھے اتنی بُزدلی دے دے
میں اپنے پیٹ پہ پتھر بھی باندھ سکتا ھوں
مجھے غذا کی طرح رزقِ شاعری دے دے
بِکھر نہ جائے کہیں غنچۂِ دلِ مضطر
لرزتی شاخ کو اب حُسن تازگی دے دے
مرے لہو کی رگوں میں الاؤ سے بھر دے
پرایک موجِ نفس کو تو سرکشی دے دے
کِھلیں نہ پھول کسی کم نظر کے آنگن میں
نئی بہار کو بس اتنی بے بسی دے دے
بلا کی دھوپ میں جلتے ھوئے بدن محمود
اُسے پکار وہ سورج کو زہر ہی دے دے


“کھوار تراجم”
ہردی اوچے نظروت ہتے آولانو غون روشتیو دیت
مه شعورو، متے مه آگہیو دیت
اوا ای مومو کڑبوکی اسوم دشتِ آتشہ
مہ قبضا ہانیسے سحرِ سانوریو دیت
کوس دی حقو وولٹی شوم نیتہ مو لوڑام
مہ خدایا تو متے ہرونی بُزدلیو دیت
اوا تان اشکمائی بوہرت دی بوتیکو بوم
متے خوراکو قسمہ رزقِ شاعریو دیت
بچھاراش بیتی مو بوغار کورا غنچۂِ دلِ مضطر
ڑینگاک تھاغوتے ہانیسے حُسن تازگیو دیت
مه لئیو یوران انگارو باساری ٹیپ کورے
لیکن ای موجِ نفسوتے تو سرکشیو دیت
نو بوچھوشانی گمبوری کیہ کم نظرو موخینہ
نوغ بوسونیوتے بس ہرونی بے بسیو دیت
تیز پالئیاک یورا پولوواک بدن محمود
ہتوت ہوئے دیت کہ ہسے یوروتے زیرو دیار۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

سیلف میڈ مین قدید احمد

بدھ دسمبر 6 , 2023
امجد اسلام امجد مرحوم کی ‘سیلف میڈ لوگوں کا المیہ’ کے عنوان سے ایک خوبصورت نظم ہے جسے پڑھتے ہوئے دبئی میں مقیم سیالکوٹ کا ایک نوجوان
سیلف میڈ مین قدید احمد

مزید دلچسپ تحریریں