آ کہ پھر لوٹ چلیں ہم

iattock

آکہ پھر لوٹ چلیں ہم اسی منزل کی طرف

جس نے بخشی تھی کبھی عزت و توقیر ہمیں

اب بھی روشن ہیں کہیں دل کے نہاں خانوں میں

اپنی کھوئی ہوئی عظمت کے وہ پارینہ چراغ

جن سے روشن تھے کبھی مسکن ظلمت ہر سو

علم پر جن کے تھا تہذیب و تمدن کا مدار

آکہ پھر لوٹ چلیں دیں کہ پنہ گاہوں میں

مسٔلے ختم کریں ہم من و تو کے سہارے

خود کو ڈھالیں اسی کردار کے سانچے میں اب

جس نے اک بار دیا تھا ہمیں جینے کا سراغ

خشکی و آب پہ بخشی تھی حکومت جس نے

جس نے رکھی تھی ہر اک دل میں محبت کی اساس

آکہ پھر لوٹ چلیں مصحف اعظم کی طرف

رہنمائی کا جو منبع ہے ازل کے دن سے

جس کے ہر لفظ میں مخفی ہے خدا کی حکمت

جس سے دوری ہے سدا باعث رسوائی ہمیں

اپنی توقیر کا پھر سے ذرا ساماں کرلیں

اپنی ہر فکر کو ہم پھر سے مسلماں کر لیں

آکہ پھر لوٹ چلیں ہم اسی منزل کی طرف

آکہ پھر لوٹ چلیں ہم اسی ساحل کی طرف

Akmal Nazeer

اکمل نذیر

بہرائچ

اکمل نذیر

Next Post

شہباز تیری پرواز سے جلتا ہے زمانہ

ہفتہ مئی 8 , 2021
انصاف وہ ہے جو صرف ہوتا نہیں بلکہ چلتا پھرتا اور دوڑتا دکھائی دے ۔ ایسے ہی انصاف کی مثالیں آجکل پاکستان کی عدالتوں سے مل رہی ہیں
iattock