ایسی باتیں بھی سرِعام میں کر جاتا ہوں

ایسی باتیں بھی سرِعام میں کر جاتا ہوں
تیری تصویر میں رنگ اپنےمیں بھر جاتا ہوں


مجھ کو حالات نے تبدیل کیا ہے ایسا
دیکھ کر خود کو میں اب خودسے ڈر جاتا ہوں


میرا احباب کی باتوں پہ یقیں ہے پُختہ
شک کی سیڑھی سے مَیں فی الفور اُتر جاتا ہوں


اپنے بچوں سے ملا سکتا نہیں ہوں آنکھیں
ہاتھ خالی لیے جب شام کو گھر جاتا ہوں


کج ادائی نے جما رکھے ہیں ڈیرے کُچھ یُوں
گھر کے رستے سے بھی چُپ چاپ گزر جاتا ہوں


یُوں ڈراتا ہے اسدؔ عمر کا جنگل مجھ کو
ایک پتا بھی جو گِرتا ہے تو ڈ ر جاتا ہوں

imran asad

عمران اسدؔ

پنڈیگھیب

مسقط، سلطنت عمان

عمران اسؔد

Next Post

ایک سال کی روداد

اتوار اکتوبر 31 , 2021
ایک سال کی قلیل مدت میں ہم اپنی شاخت بنانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔یہ کوئی آسان کام نہیں تھا۔ہمیں رسائل کے اس ہجوم میں اپنی شناخت بنانے کے لیے انفرادیت مطلوب تھی۔
iAttock 1st Birthday