آرسی رؤف کا افسانہ “تکون”

آرسی رؤف کا افسانہ “تکون”: فنی و فکری مطالعہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی*

(ورلڈ ریکارڈ ہولڈر)

[email protected]

آرسی رؤف نے لکھنے کا  آغاز 2019 میں آواز صبح، ندائے خلق اور جیو ہزارہ میں آرٹیکل لکھتے ہوئے کیا۔ بعد ازاں ادب اطفال سے بھی منسلک ہو گئیں اور مختلف رسائل و اخبارات میں نظم اور کہانیاں لکھیں۔ شاعری کا ذوق بچپن سے ہی ہے۔ اپوا سے شائع  کردہ  دیوان سخن  میں بطور اشتراکی شاعرہ شمولیت اختیار کی۔انگریزی ناولٹ Ties and Knots بطور اینتھالوجی چھپ چکا ہے۔ بچوں کا ناولٹ کہاوتوں کی جادونگری ان کی تخلیق ہے۔ کبھی کبھار افسانہ نگاری میں بھی طبع آزمائی کرتی ہیں۔

آرسی رؤف کا اردو افسانہ “تکون” معاشرتی دباؤ، ذاتی خواہشات اور انسانی رشتوں کی پیچیدگیوں کی پیچیدہ کہانیوں کی ایک مختصر جھلک پر مبنی بہترین معاشرتی کہانی ہے۔ اس افسانے میں ربیعہ کے گرد مرکوز ایک پُرجوش اور دلچسپ کہانی بنی گئی ہے، جو کہ ایک نوجوان عورت ہے اوع روایتی ماحول میں شادی اور توقعات کے میدان میں گھوم رہی ہے۔

افسانے کا عنوان “تکون” یعنی (مثلث)، علامتی طور پر ربیعہ کی زندگی کی مثلثی حرکیات کو سمیٹتا ہے۔ ایک ایسی زندگی جو خاندانی ذمہ داریوں، معاشرتی اصولوں، اور ذاتی تکمیل کی جستجو سے جڑی ہوئی ہے۔ کہانی ایک محدود جگہ میں سامنے آتی ہے، جو سماجی تعمیرات کے اندر ربیعہ کے محدود وجود کی استعاراتی طور پر عکاسی کرتی ہے۔

ربیعہ جسے کمپرومائز کرنے والی اور قابل عورت کے طور پر دکھایا گیا ہے، اپنے محدود دائرے میں رہتے ہوئے خوشی کی جھلک تراشنے کے لیے سرگرداں ہے۔ مصنفہ آرسی رؤف نے اپنی فکر انگیز نثر کے ذریعے مرکزی کردار ربیعہ کو مشکلات سے نبرد آزما ہونے والی ایک ہیروئن کے طور پر پیش کیا ہے- ایک مرکزی کردار جس کی اندرونی جدوجہد اس کی تقدیر کو تشکیل دینے والی بیرونی قوتوں کی آئینہ دار ہے۔

بیانیہ ثقافتی توقعات کے پس منظر میں محبت، فرض، اور خود حقیقت پسندی کے موضوعات کو بڑی مہارت سے تلاش کرتا ہے۔  ربیعہ  کا سفر ا‌‌‌یک فرض شناس بہو سے لے کر اپنی ذات کو قربان کرنے کا دعویٰ کرنے والی خاتون تک، روایت اور انفرادی خود مختاری کے درمیان لازوال تصادم کی مثال پیش کرتا ہے۔

مصنفہ نے ربیعہ کی دنیا کی کہانی کو بیان کرنے کے لیے باریک بینی کی خصوصیات کا استعمال کیا ہے۔ ربیعہ کے شوہر زبیر، ربیعہ کے اس جڑے ہوئے وجود کی 

 نمائندگی کرتے ہوئے  نظر آتے ہیں، جو اس سے بھی آگے بڑھنا چاہتی ہے۔ اس کی خوش فہمی اور معاشرتی پابندی  ربیعہ کے اندرونی انتشار کو جوڑ کر سامنے لاتی ہے، جو ذاتی خواہشات اور معاشرتی احکام کے درمیان تضاد کو اجاگر کرتی ہے۔

افسانے میں  الفاظ کی  خوبصورت انداز میں منظر کشی کی گئی ہے جو بیانیہ کے جذباتی انداز کو اجاگر کرتے ہیں۔آرسی رؤف کی زبان نے  ربیعہ کے جذباتی تغیر کو واضح طور پر پکڑ لیا ہے، استغنیٰ سے بغاوت تک، مطابقت سے آزادی تک ہر موضوع کو افسانے میں شامل کیا گیا ہے۔ افسانے میں گھریلو ماحول کو سماجی ‌رویے کا ایک مائیکرو کاسم بنا کر پیش کیا گیا ہے، جہاں ربیعہ  کی خود كو حقیقت پسندی کے لیے تیار کرنے کی جدوجہد کا آغاز ہوتا ہے۔

ربیعہ کے اپنی ازدواجی قید سے آزاد ہونے کے فیصلے سے نشان زد داستان کی مذمت، کہانی کی موضوعاتی گہرائی کو واضح کرتی ہے۔ ربیعہ  کا زبیر کو طلاق دینے کا عمل نہ صرف اس کے ذاتی سفر کا خاتمہ ہے بلکہ پدرانہ معاشروں میں خواتین کو درپیش رکاوٹوں پر ایک وسیع تبصرہ بھی ہے۔

خلاصہ کلام یہ ہے کہ آرسی رؤف کا افسانہ “تکون” خواتین اور سماجی توقعات کی ایک پُرجوش تحقیق پر مبنی بہترین معاشرتی کہانی ہے۔ ربیعہ کی کہانی کے ذریعے آرسی رؤف روایت، انفرادیت، اور تکمیل کی جستجو کے سنگم پر گہری  کہانی پیش کرتی ہیں۔ یہ کہانی پائیدار انسانی روح کے ثبوت کے طور پر ابھر کر سامنے آئی ہے جو معاشرتی اصولوں کی حدود سے تجاوز کرنے کی کوشش کرتی ہے – ایک ایسی داستان جو قاری کے شعور میں رہتی ہے اور پہلے سے تصور شدہ تصورات کو چیلنج کرتی ہے اور خود پسندی کے ناقابل تسخیر حصول کا جشن مناتی ہے۔ میں مصنفہ کو اتنی اچھی کہانی تخلیق کرنے پر مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

Title Image by Steve Buissinne from Pixabay

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

رحمت عزیز خان چترالی

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

Next Post

موبائل بیلنس پر نان فائلرز سے 90% ٹیکس لینے کا فیصلہ

بدھ مئی 15 , 2024
فیڈرل بورڈ آف ریونیو (FBR) کی طرف سے نان فائلرز سے موبائل بیلنس کے 100 روپے کے لوڈ پر ود ہولڈنگ ٹیکس کو 10% سے بڑھا کر
موبائل بیلنس پر نان فائلرز سے 90% ٹیکس لینے کا فیصلہ

مزید دلچسپ تحریریں