نوابزادہ نصر الله خان کی شاعری کا تجزیاتی مطالعہ

نوابزادہ نصر الله خان کی شاعری کا تجزیاتی مطالعہ

رحمت عزیز خان چترالی

بزرگ سیاستدان نوابزادہ نصر الله خان ناصر نے اپنی اردو غزلیات میں درد، تکلیف، جبر، نانصافی اور معاشرتی نانصافیوں کے پیچیدہ موضوعات کو سمیٹتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔
نوابزادہ کی غزل اظہار کی متضاد نوعیت کی طرف اشارہ کرتی ہے، جہاں درد آسانی کے طور پر اندھیرے کو روشن خیالی کی طرح، اور غم خاموشی کے پیچھے چھپا ہوا ہے۔ آپ کے اشعار انسانی تجربے کے دوہری پہلوؤں کو کھولتی ہیں، جو سماجی اصولوں اور ذاتی جدوجہد کے اندر ظلم اور باریکیوں کو ظاہر کرتی ہیں۔
نوابزادہ نصر الله خان ناصر کی شاعری کا ڈھانچہ غزل کی روایتی شکل پر قائم ہے، جس میں اشعار ایک مشترکہ موضوع سے مربوط ہیں۔ ہر شعر انسانی حالت کا ایک الگ پہلو پیش کرتی ہے، متضاد خیالات کے درمیان گھومتی ہوئی اندرونی انتشار، معاشرتی تنقید اور روحانی عکاسی کی مربوط داستان کو برقرار رکھتی ہے۔
نوابزادہ نصر الله خان ناصر پیچیدہ جذبات کو بیان کرنے کے لیے استعارہ اور ستم ظریفی جیسے طاقتور ادبی آلات کا استعمال کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ استعاراتی طور پر درد کو آسانی سے اور جبر کو قبولیت سے جوڑتے ہوئے، وہ روایتی تشریحات کو چیلنج کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے اور ظاہری سادگی کے نیچے چھپی تہوں سے پردہ اٹھاتا ہے۔ ان کی شاعری میں ستم ظریفی کا استعمال معاشرتی منافقت اور پیچیدگیوں کو بے نقاب کرتا ہے، نوابزادہ اپنی شاعری کے اندر ایک فکر انگیز منظر نامہ تخلیق کرتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔
آپ کی شاعری معاشرتی ناانصافیوں اور ذاتی الجھنوں کا سامنا کرنے والے افراد کی جدوجہد کی بازگشت کرتی ہیں۔ لکیریں متضاد تصورات کو جوڑتی ہیں، کثیر جہتی انسانی تجربے کی ایک واضح تصویر پیش کرتی ہیں۔ ‘سرسر’ کو ‘صبا’ اور ‘اندھیرے’ کو ‘ضیاء’ کے طور پر حوالہ دینا زندگی میں موجود تضادات کی نشاندہی کرتا ہے، جہاں سکون کو مشقت اور روشن خیالی کو مبہم بنا دیا گیا ہے۔
کسی کے گناہوں کے نتیجے میں درد کی تصویر کشی، اور اظہار کی ایک نئی شکل کے طور پر خاموشی، افراد کو درپیش اندرونی تنازعات اور سماجی دباؤ کی عکاسی کرتی ہے۔ نوابزادہ نصر الله خان ناصر نے سماجی شخصیات پر باریک بینی سے تنقید کی ہے اور انہیں علمدار (‘اہل دانش’) کا لیبل لگایا ہے لیکن ان کی وفاداری کے اعلانات میں گمراہ کن تفاوت موجود ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ نوابزادہ نصر الله خان ناصر کی غزل اپنے پیچیدہ شاعرانہ آلات اور موضوعاتی گہرائی کے ذریعے انسانی حالت کی گہری بصیرت کے طور پر ہمارے سامنے ہیں، اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے نواب نصر الله خان ناصر کی غزل پیش خدمت ہے۔
”غزل”
کتنے بے درد ہیں صَرصَر کو صبا کہتے ہیں
کیسے ظالم ہیں کہ ظلمت کو ضیا کہتے ہیں
جبر کو میرے گناہوں کی سزا کہتے ہیں
میری مجبوری کو تسلیم و رضا کہتے ہیں
غم نہیں گر لبِ اظہار پر پابندی ہے
خامشی کو بھی تو اِک طرزِ نوا کہتے ہیں
کُشتگانِ ستم و جور کو بھی دیکھ تو لیں
اہلِ دانش جو جفاؤں کو وفا کہتے ہیں
کل بھی حق بات جو کہنی تھی سرِ دار کہی
آج بھی پیشِ بتاں نامِ خدا کہتے ہیں
یوں تو محفل سے تری اُٹھ گئے سب دل والے
ایک دیوانہ تھا وہ بھی نہ رہا کہتے ہیں
یہ مسیحائی بھی کیا خوب مسیحائی ہے
چارہ گر موت کو تکمیلِ شِفا کہتے ہیں
بزمِ زنداں میں ہوا شورِ سلاسل برپا
دہر والے اسے پائل کی صدا کہتے ہیں
آندھیاں میرے نشیمن کو اڑانے اٹھیں
میرے گھر آئے گا طوفانِ بلا کہتے ہیں
اُن کے ہاتھوں پہ اگر خون کے چھینٹے دیکھیں
مصلحت کیش اسے رنگِ حنا کہتے ہیں
میری فریاد کو اِس عہد ہوس میں ناصر
ایک مجذوب کی بے وقت صدا کہتے ہیں

[email protected] | تحریریں

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

وادیءِ تحقیق میں مقبول

اتوار نومبر 26 , 2023
نظم ہو یا نثر عاصم بخاری دونوں میں کامیاب ہیں اور لفظوں کے دیئے جلا کر سوچوں کے اندھیرے دور کرنے میں مصروف ہیں
وادیءِ تحقیق میں مقبول

مزید دلچسپ تحریریں