علوی سے اعوان تک

تحریر وتحقیق

ملک کامران اختر اعوان

آخر کیا وجہ تھی کہ اعوان علوی کے بجائے اعوان مشہور ہو گئے ، دراصل یہ قبیلہ حضرت عون عرف قطب شاہ غازی بن علی بن محمد حنفیہ ؒ بن حضرت علی کرم اللہ وجہہ کی اولاد سے ہیں کتاب نسب قریش عربی 156 ہجری تا 236 ہجری لابی عبداللہ المصعب کے صفحہ 77 پر درج ہے کہ “عون بن علی بن محمد( حنفیہ ) بن علی ؑبن ابی طالب ؑکی اولاد بنی عون ہے” انہی عون کی اولاد سے سالار مسعود غازی ؒ بن سالار ملک ساہو غازی بن عطاء اللہ غازی بن طاہر غازی بن طیب غازی بن شاہ محمد غازی بن شاہ علی غازی بن محمد اشھل البقیع عرف اسف غازی بن عون عرف قطب غازی بن علی عبدالمنان بن محمد حنفیہ ؒ بن حضرت علی کرم اللہ وجہہ تھے جو سلطان محمود غزنوی کے بھانجے تھے مندرجہ بالا شجرہ نسب منبع الانساب از سید معین الحق جھونسوی قدس سرہ 830 ہجری فارسی صفحہ 103 ، 104 پر درج ہے اور یہ بھی درج ہے کہ سالار مسعود غازی رح سلطان محمود غزنوی بن سبکتگین کے بھانجے تھے اور اسی سالار غازی علوی خاندان کے متعلق تاریخ بیہقی از ابو الفضل بیہقی جو سلطان محمود غزنوی کے فرزند سلطان مسعود کے دور کی کتاب ہے صفحہ 57 پر سالار غازیان و سالار علویان کے حوالے سے ذکر ملتا ہے

یہ قبیلہ پہلے علوی بنی عون کے نام سے مشہور تھا جب یہ قبیلہ سلطان محمود غزنوی کے ہمراہ بغرض جہاد فی سبیل اللہ ہند میں داخل ہوا تو یہ لوگ سلطان محمود غزنوی کے اعوان یعنی مددگار کہلائے اعوان کے معنی مددگار ہیں اور یہ خطاب “اعوان” مستقل قبیلہ کی صورت اختیار کر گیا کیونکہ سلطان محمود غزنوی کے اعوان یعنی مددگار کہلانا اس ملک میں قابل فخر تھا اعوان قبیلہ کا اصل علوی ہے کشف المحجوب از داتا گنج بخش ؒاصل نسخہ فارسی میں بھی سلطان محمود غزنوی کے امراء جو اعوان کہلاتے تھے کا ذکر ملتا ہے جیسا کہ تاریخ بیہقی از ابو الفضل بیہقی صفحہ 57 پر درج ہے “رئیس و خطیب و نقیب علویان و سالار علویان و سالار غازیان ”  کتاب تہذیب الانساب عربی 449 ہجری کے مطابق علی بن محمد اشھل البقیع بن عون بن علی بن محمد حنفیہ بن حضرت علی کرم اللہ وجہہ کے تین فرزندان علی بن علی، موسی بن علی، و الحسن بن علی کے علاوہ باقی یعنی عیسی بن علی، محمد بن علی، احمد بن علی، و الحسين بن علی ہند میں موجود ہیں مندرجہ بالا محمد بن علی و احمد بن علی ابنان علی بن محمد اشھل البقیع بن عون عرف قطب غازی ؒ کو منبع الانساب 830 ہجری از سید معین الحق جھونسوی قدس سرہ نے محمد غازی و احمد غازی درج کیا ہے کشف المحجوب فارسی از سید علی ہجویری المعروف بہ داتا گنج بخشؒ اصل نسخہ میں سلطان محمود غزنوی کے اعوانوں کا ذکر موجود ہے یہ کتاب تقریبا سلطان محمود غزنوی کے دور کی کتاب ہے

یہ علوی بنی عون قبیلہ جو پہلے ہی اپنے جدامجد حضرت عون قطب شاہ غازی ؒ کے نام کی نسبت سے علوی بنی عون مشہور تھا سلطان محمود غزنوی کے ساتھ جہاد میں شمولیت کی وجہ سے اعوان مشہور ہو گئے جو پہلے ہی اپنے جدامجد کے نام سے بنی عون تھے اور اسی طرح یہ قبیلہ اپنے جد امجد عون قطب شاہ غازی ؒ    کی وجہ سے قطب شاہی بھی کہلاتا ہے برصغیر پاک و ہند میں سالار مسعود غازی ؒ کے چچا سالار ملک قطب حیدر شاہ غازی بن عطاء اللہ غازی ؒ کے گیارہ فرزندان کی اولاد موجود ہے۔

malik kamran

ملک کامران اختر اعون

ملک کامران اختر اعوان

Next Post

محفل شعروادب کیمبل پور

جمعہ مئی 28 , 2021
ضلع اٹک میں سب سے زیادہ فعال،مفید،کارآمد اور سب سے زیادہ عمر پانے والی ادبی تنظیم ہے۔اس وقت اٹک کے ہر چھوٹے بڑے ادیب پر اس تنظیم کے اثرات ہیں
iattock

مزید دلچسپ تحریریں