افسانہ “ٹریفک سگنل” کا فنی و فکری جائزہ

ملک نعمان حیدر حامی کا افسانہ “ٹریفک سگنل” کا فنی و فکری جائزہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی*

ملک نعمان حیدر حامی دور جدید کے منفرد سوچ کے حامل شاعر اور ادیب ہیں۔ آپ کا تعلق پنجاب کے ضلع بھکر سے ہے۔ آپ اپنے ضلع کی دھرتی کے پہلے کم عمر نوجوان طالب علم ادیب کا اعزاز رکھتے ہیں۔ آپ اس وقت شعبہ قانون یونیورسٹی آف اوکاڑہ میں زیر تعلیم ہیں۔ آپ کی ادبی خدمات کے اعتراف میں آپ کو کئی ایوارڈ و اعزازات سے نوازا جا چکا ہے۔ آپ بڑوں کے ادب کے ساتھ ساتھ ادب اطفال کے بھی لکھاری ہیں۔ آپ کی پہلی کتاب “جادوئی گیند” منظرعام پر آ چکی ہے۔ آپ بیک وقت افسانہ نگار، سٹوری رائٹر اور کالم نگار بھی ہیں۔ مزید برآں آپ کو پاکستان کے تقریباً ہر نیشنل لیول کے نیوز پیپرز میں لکھنے کا موقع مل چکا ہے۔ آپ بزمِ لوح و قلم انٹرنیشنل کے سی ای او بھی ہیں۔
ملک نعمان حیدر حامی کی نئی تخلیق “ٹریفک سگنل” کے عنوان سے اردو افسانہ نگاری کی ایک بہترین کہانی کے طور پر کلاس روم کی ایک سیٹنگ کے گرد گھومتی ہے جہاں مس فروا اپنی طالبات کو ٹریفک سگنلز کے بارے میں سبق سکھاتی ہے۔ داستان اس وقت سامنے آتی ہے جب وہ روزمرہ کی زندگی میں ٹریفک سگنلز کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے ایک پہیلی کے ذریعے موضوع کا تعارف کراتی ہے۔ یہ کہانی ٹریفک قوانین کے بارے میں تاریخی سیاق و سباق فراہم کرتی ہے، ٹریفک سگنلز اور ان کے رنگوں کے ارتقاء کی وضاحت کرتی ہے، نظمو ضبط کو برقرار رکھنے اور حادثات کو روکنے میں ان کے کردار پر زور دیتی ہے۔

افسانہ “ٹریفک سگنل” کا فنی و فکری جائزہ
ملک نعمان حیدر


کہانی کا مرکزی موضوع ٹریفک سگنلز کی اہمیت ہے جو کہ نظم و ضبط، حفاظت اور سماجی تعاون کی علامت ہے۔ ٹریفک قوانین کی لفظی سمجھ سے بالاتر، بیانیہ زندگی کے وسیع تر اسباق، صبر، سمجھ اور زندگی کے سفر میں توقف کی ضرورت کی حوصلہ افزائی پر مشتمل ہے۔


کہانی کلاس روم کے ڈھانچے کی پیروی کرتی ہے، جس میں مس فروا معلومات پہنچانے کے لیے تدریسی طریقے استعمال کرتی ہیں۔ مذہبی اور ثقافتی عناصر پر ابتدائی توجہ (سورہ کوثر اور نعت کی تلاوت) ٹریفک سگنلز پر بعد میں ہونے والی بحث کے ساتھ باریک بینی سے تعلق رکھتی ہے، جو زندگی کے مختلف پہلوؤں کے باہمی ربط کو واضح کرتی ہے۔ ڈھانچہ بڑی خوبصورتی سے تعلیمی عناصر کو بیانیہ کو پیش کرتا ہے۔
کہانی میں کئی ادبی آلات استعمال کیے گئے ہیں، جیسے کہ طلبہ کو مشغول کرنے اور سسپنس پیدا کرنے کے لیے ایک پہیلی کا استعمال وغیرہ، مزید برآں، ٹریفک سگنلز کی ترقی کے بارے میں تاریخی حقائق کو شامل کرنا بیانیہ میں گہرائی کا اضافہ کرتا ہے۔ مکالمے پر مبنی نقطہ نظر اور سوالات کا استعمال قارئین کی مصروفیت کو ابھارتا ہے، جس سے کہانی معلوماتی ہونے کے ساتھ ساتھ انٹرایکٹو دونوں بنتی ہے۔
کہانی میں ٹریفک سگنلز کے بارے میں بہترین معلومات لوگوں تک پہنچانے کے لیے کلاس روم کے منظر نامے کو استعمال کیا گیا ہے اور تعلیمی عناصر کو ایک خیالی ترتیب کے ساتھ مؤثر طریقے سے جوڑ کر پیش کیا گیا ہے۔ تاریخی حقائق کا انضمام اور ٹریفک سگنلز میں رنگوں کے انتخاب کی وضاحت مصنف کی پیچیدہ تحقیق کو ظاہر کرتی ہے۔ بیانیہ باریک بینی سے زندگی کے اسباق کو سامنے لاتا ہے اور زندگی کے چیلنجوں کو نیویگیٹ کرنے میں صبر اور سمجھ کی اہمیت پر عکاسی کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ ملک نعمان حیدر حامی کی کہانی “ٹریفک سگنل” نہ صرف ٹریفک قوانین کے بارے میں ایک سبق کے طور پر کام کرتا ہے بلکہ بڑی خوبصورتی کے ساتھ ایسے وسیع موضوعات کو بھی شامل کرتا ہے جو روزمرہ کی زندگی کے ساتھ پیش آتے ہیں۔ کہانی ایک اچھی ساخت اور معلوماتی نقطہ نظر کے ذریعے قارئین کو مطالعے میں مشغول کرتی ہے جو اسے اردو کے مختصر افسانے کا ایک بصیرت بخش حصہ بناتی ہے۔

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

متبادل نظام حکومت

بدھ جنوری 31 , 2024
انتخابات سے پہلے ہی یہ وسوسے زور پکڑ رہے ہیں کہ ایک تو اس الیکشن پر خون خرابے اور امن و امان کا مسئلہ پیدا ہو سکتا ہے
متبادل نظام حکومت

مزید دلچسپ تحریریں