محمدؐ دے نغمے سُریلے سُنڑا کے

محمدؐ دے نغمے سُریلے سُنڑا کے

گِھناں داد ربّ توں میں جھولی اُٹھا کے

رضاواں دا مالک ، خدا توں اَکھایا

تُوں بستر تے اَپڑیں علیؑ نوں سُوا کے

ہُنڑیں کوئی آکھے نبی پے سَدینن

زمیناں تے بیٹھاں میں پلکاں وِچھا کے

میں جالی بی چُمساں میں روضہ بی چُمساں

کوئی گِھن تاں ونجے لُکا کے چھپا کے

سُنڑاں وے کہ سرکار آپے بلینن

میں تاں ای تاں بیٹھاں  نگاہاں جُھکا کے

اے پُھلاں نے گجرے تے ہاراں نے تحفے

میں خُش تھیساں سوہنڑیں نبیؐ نوں پوا کے

کدائیں تے ہجراں دی سولی توں لِہسَن

میں آہاں بھریساں نبیؐ نوں سُنڑا کے

اکھیساں نبیؐ جی دے پیراں نوں چُم کے

اے اَتھرُو ہی آندِن میں تحفہ بنڑا کے

 وچھوڑے غریباں دے قائم گھٹاونڑ

او خاباں چے آسن فرشتے رَلا کے

حبدار قائم

سیّد حبدار قائم

آف غریب وال ضلع اٹک

حبدار قائم

میرا تعلق پنڈیگھیب کے ایک نواحی گاوں غریبوال سے ہے میں نے اپنا ادبی سفر 1985 سے شروع کیا تھا جو عسکری فرائض کی وجہ سے ١٩٨٩ میں رک گیا جو 2015 میں دوبارہ شروع کیا ہے جس میں نعت نظم سلام اور غزل لکھ رہا ہوں نثر میں میری دو اردو کتابیں جبکہ ایک پنجابی کتاب اشاعت آشنا ہو چکی ہے

Next Post

میرا گاؤں غریب وال - 1

پیر مارچ 22 , 2021
یہ گاؤں آج سے تقریبا پانچ سو سال پہلے ہندووں نے آباد کیا تھا جو تقسیم کے بعد انڈیا چلے گئے اور زمینیں اپنے مزارعین کے حوالے کر گئے ۔
Ghreebwal Pond

مزید دلچسپ تحریریں