خود کشی کرنے والی اردو کی ایک اور شاعرہ

ساکشی صدف: خود کشی کرنے والی اردو کی ایک اور شاعرہ

ساکشی صدف جوکہ اردو کی نوجوان اور مقبول شاعرہ تھی نے چند دن پہلے نامعلوم وجوہات کی بناپر خودکشی کرلی۔ آپ کی اردو شاعری انسانی رشتوں اور وجود کی پیچیدگیوں کے گہرے عکاسی کو سمیٹتی ہے۔ اپنی فکر انگیز اشعار کے ذریعے وہ خاموشی کی طاقت، باہمی حرکیات کی باریکیوں اور معاشرتی ناانصافیوں کے خلاف جدوجہد کا پتہ دیتی ہے۔ اس کی شاعری قارئین کو جذبات اور خود آگاہی کی گہرائیوں کو تلاش کرنے کی دعوت دیتی ہے۔
ساکشی صدف کی شاعری میں ایک مروجہ موضوع خاموشی اور شور کا امتزاج پایا جاتا ہے۔ وہ رشتوں پر خاموشی کے اثرات پر غور کرتی ہوئی دکھائی دیتی ہے، اور اس بات پر بھی زور دیتی ہے کہ خاموشی کے لمحات میں بھی لطیف آوازیں برقرار رہتی ہیں۔ آپ کے اشعار معاشرتی برائیوں کے لئے گہری نفرت کی بازگشت کرتی ہیں، ان کا مقابلہ کرنے اور ان پر قابو پانے کی اہمیت پر زور دیتی ہیں۔ ساکشی کی شاعری کا مرکزی خیال داخلی غور و فکر اور بیرونی سرگرمی کے درمیان نازک توازن کے گرد گھومتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔

خود کشی کرنے والی اردو کی ایک اور شاعرہ
ساکشی صدف


صدف نے مہارت سے اپنے موضوعاتی عناصر کو اپنی شاعری کے ساختی تانے بانے میں بُنایا ہے۔ آپ اپنے اشعار کے الفاظ کے جذباتی اثر کو بڑھاتے ہوئے ایک تال میل کی نمائش کرتی ہیں۔ خاموشی اور شور کے درمیان تعامل اس کی شاعرانہ ساخت کے لطیف تغیرات میں آئینہ دار نظر آتا ہے، جو انسانی روابط کی پیچیدگیوں کو واضح کرتا ہے۔ ساختی تنوع کے اندر موضوعاتی اتحاد پرتوں والے معنی بیان کرنے میں ساکشی صدف کی مہارت کی عکاسی کرتا ہے۔
ساکشی صدف اپنی شاعری کی جذباتی گونج کو وسعت دینے کے لیے ادبی آلات کی ایک بھرپور صف استعمال کرتی ہیں۔ استعارے، جیسے “چمکتا سورج”، قوی علامت کے طور پر کام کرتے ہیں، قارئین کو اشعار کی متعدد سطحوں پر تشریح کرنے کی دعوت دیتے ہیں۔ شخصیت سازی اور بہترین امیجری کا استعمال حسی تجربے کو بلند کرتا ہے، جس سے اس کے کام کو لسانی فنکاری کا ٹیپسٹری بنا دیا جاتا ہے۔


اپنی شاعری میں صدف گہری بصیرت کے ساتھ خاموشی اور شور کے فرق کو تلاش کرتی ہے۔ یہ دعویٰ کہ “اگر ہم خاموش ہیں تو بھی ہم شور مچا سکتے ہیں” غیر فعال مزاحمت کے تضاد کی نقاب کشائی کرتا ہے۔ “صرف وہی کریں جو آپ سنبھال سکتے ہیں” کی کال سماجی افراتفری کے درمیان خود کو بچانے کے موضوعات کی بازگشت کرتی ہے۔ دنیاوی برائیوں کی مذمت کے ساتھ ساتھ “چمکتے سورج کو بجھانے” کے دلیرانہ دعوے نے ایک باغی جذبے کی نقاب کشائی کی ہے اور آپ کی مزاحمتی شاعری قارئین کو روایتی اصولوں کو چیلنج کرنے پر اکساتی ہے۔
ساکشی صدف کی اردو شاعری لسانی حدود سے ماورا ہے، جو قارئین کو انسانی تجربے کی پیچیدگیوں میں شاعرانہ سفر پر لے جاتی ہے۔ موضوعاتی گہرائی، ساختی نفاست اور ادبی صلاحیت کے ذریعے صدف کی شاعری وجود کی پیچیدگیوں کو کھولنے میں الفاظ کی پائیدار طاقت کے ثبوت کے طور پر ہمارے سامنے ہے۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے ساکشی صدف کی شاعری سے چند اشعار پیش خدمت ہیں۔
*
اپنی انکھوں سے کئی شور سنا سکتے ہیں
رہ کے خاموش بھی ہم شور مچا سکتے ہیں
دوست دشمن یا اور کوئی رشتہ ہو
صرف وہ کیجئے جو آپ نبھا سکتے ہیں
ہم کو دنیا کے اجالوں سے بہت نفرت ہے
ہم چمکتا ہوا سورج بھی بجھا سکتے ہیں

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

الیکشن سنہ 2024ء سیاسی انقلاب یا خرید و فروخت کی منڈی؟

جمعہ فروری 9 , 2024
تا دم تحریر اب تک کی صورتحال یہ ہے کہ اس الیکشن کے حیران کن نتائج مقتدرہ اور نون لیگ کی امیدوں پر پانی پھیرنے کا کام کر سکتے ہیں۔
الیکشن سنہ 2024ء سیاسی انقلاب یا خرید و فروخت کی منڈی؟

مزید دلچسپ تحریریں