محمد نعیم خان کی “حمدیہ شاعری” کا تجزیاتی مطالعہ

محمد نعیم خان کی “حمدیہ شاعری” کا تجزیاتی مطالعہ

محمد نعیم خان کا تعلق اننت ناگ کشمیر سے ہے آپ کی “حمدیہ شاعری” شکرگزاری، دعا اور مناجات کے موضوعات پر مبنی ہے اور حمد رب جلیل میں انبیاء اور ان کی آزمائشوں کی کہانیوں خوبصورتی سے بیان کیا گیا ہے۔

“آپ کی حمدیہ شاعری” کا مرکزی موضوع اللہ رب العزت کے لیے شکرگزاری اور حمد کے اظہار کے گرد گھومتا ہوا نظر آتا ہے۔ یہ اس خیال پر زور دیتا ہے کہ خدا کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں ہے۔محمد نعیم خان کی حمدیہ شاعری قارئین پر زور دیتی ہے کہ وہ انسانیت کی قدر کریں اور الله کی طرف سے عطا کی گئی نعمتوں پر غور و فکر کریں اور الله تعالیٰ کا شکر ادا کریں۔ یہ حمدیہ نظم انسانیت کی رہنمائی میں انبیاء کے اہم کردار کو اجاگر کرتی ہے اور ان کے لیے عقیدت اور محبت کا جذبہ پیدا کرنے کی کوشش کرتی ہے۔

محمد نعیم خان کی “حمدیہ شاعری” کا تجزیاتی مطالعہ
محمد نعیم خان

محمد نعیم خان کی “حمدیہ شاعری” کو قطعاتی شکل کی ایک سیریز کے طور پر تشکیل دیا گیا ہے، ہر ایک میں گہرے افکار و خیالات کی عکاسی اور تعریفیں شامل ہیں۔ حمدیہ کلام کا مستقل ڈھانچہ بار بار پڑھنے کی اجازت دیتا ہے۔ تھیمز بغیر کسی رکاوٹ کے ڈھانچے میں بہترین ترتیب سے بنے ہوئے دکھائی دیتے ہیں، حمدیہ اشعار ایک مربوط بیانیہ تخلیق کرتے ہیں جو خدا کی منفرد حیثیت کے اعتراف سے لے کر مختلف پیغمبروں کی شراکتوں اور چیلنجوں کے اعتراف تک خوبصورت اسلوب میں بیان کیے گئے ہیں۔

شاعر اپنے پیغام کو مؤثر طریقے سے پہنچانے کے لیے کئی ادبی آلات کا بھی استعمال کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ استعمال ہونے والے نمایاں آلات میں سے ایک تکرار لفظی بھی ہے جو خاص طور پر “اے قاسم عطایا” اور “اسے اچھی خدمت دو” جیسے جملے کی تکرار شامل ہے۔ یہ تکرار شاعری میں زور اور تال کا اضافہ کرتی ہے اور موضوعات اور پیغامات کی اہمیت کو واضح کرتی ہے۔

مزید برآں تمام شاعری میں علامتیت موجود ہے۔ نوح، نمرود، سلیمان، اور ابن مریم (یسوع) جیسی تاریخی شخصیات کا ذکر الہی مداخلت، فضل اور رہنمائی کی علامتی نمائندگی کرتا ہے۔ استعاراتی زبان کا استعمال، جیسا کہ “تاروں کو جلایا” اور “طوفان میں ڈوب گیا”، بیانیہ میں گہرائی اور واضح منظر کشی کا اضافہ کرتا ہے۔

“حمدیہ شاعری” محمد نعیم خان کے گہرے روحانی تعلق اور الٰہی قدرت کے لیے تعظیم کو ظاہر کرتی ہے۔ یہ خدا کے احسان، انبیاء کی طرف سے فراہم کردہ رہنمائی، اور مصیبت پر ایمان کی حتمی فتح کے لیے اس کی شکرگزاری کی عکاسی کرتا ہے۔ شاعر کے الفاظ ایمان کی تبدیلی کی طاقت اور زندگی کے ہر پہلو میں الہی موجودگی کو تسلیم کرنے کی اہمیت کو بیان کرتے ہیں۔

حمدیہ نظم اسلامی روایت کے اندر اتحاد اور تسلسل کا احساس دلاتی ہے، کیونکہ یہ مختلف پیغمبروں اور ان کے تجربات کو جوڑتی ہوئی دکھائی دیتی ہے، انسانی نجات کی عظیم داستان میں ان کی اہمیت کو اجاگر کرتی ہے۔

خلاصہ کلام یہ ہے کہ محمد نعیم خان کی “حمدیہ شاعری” ایک بہترین دعائیہ شاعری ہے جس میں ساختی نظم، ادبی آلات، اور گہرے موضوعاتی کھوج کو یکجا کیا گیا ہے۔ یہ اشعار قارئین کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں کہ وہ اللہ کے ساتھ اپنے تعلق پر غور کریں، اظہار تشکر کریں، اور انبیاء کی کہانیوں میں سے سبق حاصل کریں۔ یہ شاعری ایمان کی لازوال قوت اور فصیح و بلیغ اشعار کے ذریعے عقیدت کے اظہار کی خوبصورتی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

Title Image by Ashish Bogawat from Pixabay

رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں ۔

تمام تحریریں لکھاریوں کی ذاتی آراء ہیں۔ ادارے کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

streamyard

Next Post

پاکستان پر عوام کا کوئی حق نہیں؟

جمعرات دسمبر 14 , 2023
جمہوریت عوام کو کوئی معاشی ریلیف نہیں دے سکتی یا معاشی استحکام نہیں لا سکتی تو اس کا بار بار تجربہ کرنا فقط وقت اور قومی دولت کا ضیاع
پاکستان پر عوام کا کوئی حق نہیں؟

مزید دلچسپ تحریریں